توانائی بچاؤ مہم بجٹ میں آٹھ کروڑ 80 لاکھ پرانے پنکھے تبدیل کرنے کا فیصلہ

تحریر: None

| شائع |

ماضی قریب کی کسی حکومت نے بجلی کی بچت کے لیے بلب بھی تبدیل کرانے کی مہم شروع کی تھی۔ نئے ایل ای ڈی بلب  کہاں کہاں روشنی پھیلا کر فیوز ہو گئے کچھ پتہ نہیں ۔بلب سکیم کا انجام دو روپے کی روٹی جیسا ہوا ۔ اب حکومت کی طرف سے 1500 روپے میں ایک پنکھا ان صارفین کو دیا جائے گا جن کے گھروں میں پرانے پنکھے لگے ہوئے ہیں اور وہ زیادہ بجلی کھینچتے ہیں ۔جن کا بل صارفین جیسے تیسے ادا کر رہے ہیں۔ اب ان کے لیے ایک سہولت فراہم کر دی گئی ہے۔

نیا پنکھا صرف 1500 روپے میں، کباڑ میں

پرانا پنکھا کاپر تار کی وجہ سے اتنے میں ہی بکے گا۔ پنکھا چلانے کے لیے بجلی کی بھی ضرورت ہوتی ہے۔ اس کے لیے کیا ہی اچھا ہو کہ حکومت چھوٹی سی  سلیٹ جتنی سولر پلیٹ بھی مہیا کر دے ورنہ جس قدر لوڈ شیڈنگ ہے ہو سکتا ہے پنکھا اب جھومتا اور سردیوں میں گھومتا نظر آئے ۔گرمیوں کے لیے حکومت دستی پنکھے فراہم کر سکتی ہے۔ایسا پنکھا گاؤں سے آئی ایک خاتون نے شہر سے خریدا۔

تھوڑی دیر بعد اس نے آ کے دکاندار سے شکایت کی کہ یہ تو ایک دو دفعہ  جھلنے سے ٹوٹ گیا۔دکاندار نے پوچھا پنکھا آپ نے جھلایا کیسے تھا، جیسے پنکھا جھلتے ہیں ویسے۔خاتون نے بتا دیا۔ دکاندار نے کہا نہیں بی بی نہیں آپ نے پنکھے کا غلط استعمال کیا ۔ آپ نے پنکھا سامنے ساکت رکھ کے اپنے چہرے کو دائیں بائیں کرنا تھا ایسا کیا ہوتاتو پنکھا نہ ٹوٹتا۔