پاکستانی ٹیم کو امریکہ میں تلاش بسیار کے بعد کڑک چائےمل گئی

تحریر: None

| شائع |

چائے میں پسند اپنی اپنی ،کڑک چائے کا مفہوم اور مطلب بھی اپنا اپنا ہے۔لمبا سفر کرنے والے ٹرک ڈرائیور تیز پتی بلکہ تیز ترین پتی اور کم میٹھے والی چائے کو کڑک چائے کہتے ہیں۔ یہ اتنی پتی ڈلواتے ہیں کہ اس چائے کا ڈبل ریٹ ہوتا ہے۔ یہی چائے عرف عام ہیں کڑک کہلاتی ہے لیکن کچھ ایسے شہزادے بھی ہیں جو آرڈر دیتے ہیں پتی پانی روک کے، دودھ میٹھا ٹھوک کے۔ان کی نظر میں یہی کڑک چائے ہوتی ہے۔ہماری ٹیم کے کھلاڑی ایسی ہی کڑک چائے پینے کے شوقین لگتے ہیں جنہوں نے ہوٹل انتظامیہ کو اس وقت وختہ ڈال دیا۔ جب

چائے کا آرڈر سرو کیا گیا تو ان کے سامنے قہوہ رکھ دیا گیا۔کوئی اسے قہوہ کہتا ہے کوئی گرین ٹی کہتا ہے ۔

یورپ  مغرب اور برطانیہ میں اسی کو چائے کہا جاتا ہے۔ یہ بغیر میٹھے کے ہوتی ہے۔ہمارے ہاں اس کو چائے ہی نہیں سمجھا جاتا جس میں دودھ نہ ہو اور چینی نہ ہو۔ہمارے کھلاڑیوں کے سامنے گرین ٹی رکھی گئی وہ سر پکڑ کے بیٹھ گئے۔ ضد کرنے لگے ہم تو دودھ پتی ہی پئیں گے۔"میں تے ہونڈا ای لیساں"۔ ہوٹل انتظامیہ نے بہرحال دودھ پتی کا کسی چھوٹے موٹے ڈھابہ ٹائپ ریسٹورنٹ سے بندوبست کروا ہی دیا جس پر ہمارے ہونہار کھلاڑی کانوں تک راضی ہو گئے۔ان کی کارکردگی دیکھ کر تو لگتا ہےکھانے میں  سری پائے اور کولڈ ڈرنک کی جگہ لسی پیتے ہونگے ۔گراؤنڈ میں داخل ہوتے ہوئے سوٹے بھی لگا کر گئے ہوں۔ان چیزوں کا نشہ جادو کے سر چڑھنے کی طرح بولتا ہے۔نشئی کا بدن بیٹنگ کر رہا ہو باؤلنگ کر رہا ہو یا فیلڈنگ، بید مجنوں کی طرح لرزتا یعنی ڈولتا ہے۔

پہلے امریکہ سے پھر انڈیا سے ہارے تو،توئے لعنت اور تبرے  نے نشہ ہرن کر دیا۔اگلے میچ میں لگا کہ ڈرائیوروں والی کڑک چائے پی کے کھیلے ہیں۔ شروع میں ایسی کڑک چائے پلا دی جاتی ہے تو کارکردگی بہتر ہوتی۔دہی لسی روٹی اچار دیسی خوراکیں ہیں۔ ولایت گئے ہیں تو ولایتی کھانے کھائیں۔اگر وہ پسند نہیں تو دیسی چیزیں پوٹلیوں میں باندھ کر ساتھ لے جائیں۔خالص دودھ پتی پینی ہے تو بھینس وہیں سے خرید فرمائیں۔ایسے بخت مارے  کبھی کبھی پاکستانیوں کو بھارت کی جیت کے لیے دعائیں کرنے پر بھی مجبور کر دیتے ہیں کہ بھارت فلاں ٹیم سے جیتے تو ہم اگلے مرحلے میں جا سکتے ہیں۔