فیس بک پر دشمن کے "#سلیپر_سیلز" جاننے پہچاننے کا طریقہ!

2020 ,مارچ 17



یہ تو آپ جانتے ہی ہوں گے کہ دشمن ممالک کی خفیہ ایجنسیوں نے وطن عزیز پاکستان کے خلاف "ففتھ جنریشن وار" شروع کر رکھی ہے جسے ہم "پانچویں نسل کی جنگی حکمت عملی" کے نام سے بھی جانتے ہیں۔ لیکن ان جنگ کے کتنے مہرے اور کتنے زاوئے ہوتے ہیں ان کا اعادہ آج تک ٹھیک سے کسی نے نہیں کیا۔ آج اسی جنگ کی ایک اور کڑی آپ کے سامنے لارھےہیں ففتھ جنریشن وار ایک ایسی جنگ ہے جس میں افواج کو آپس میں لڑوانے کے بجائے گھر بیٹھے سوشل میڈیا پر نظریاتی جنگ چھیڑ کر لڑائی جاتی ہے، پروپیگنڈہ جنگ کی جاتی ہے، پراکسی تنظیمیں جیسے ایم کیو ایم، جیئے سندھ، پشتون تحفظ موومنٹ، ٹی ٹی پی یا بی ایل اے وغیرہ تخلیق کرکے ملک کے اندر شورش، افواہ، افراتفری اور مسلسل غلط معلومات پھیلاکر دشمن کی عوام اور فوج کے حوصلے پست کیے جاتے ہیں۔ اس قسم کی جنگ میں جس چیز کا سب سے زیادہ استعمال کیا جارہا ہے وہ سوشل میڈیا ہے یعنی فیس بک، ٹویٹر، یوٹیوب وغیرہ۔ آج کی تحریر میں ھم فیس بک پر موجود دشمن کے "سلیپر سیلز" کا انکشاف کریں گ. اگر آپ اپنے اکاوںٹ کو کھنکالیں تو آپ کو بیشمار ایسی آئی ڈیز ملیں گی جو کئی مہینوں سے آپ کے اکاونٹ میں موجود تو ہوں گی لیکن ان آئی ڈیز سے کوئی خاص پوسٹ وغیرہ نہ ہونے کے برابر ہوں گی، نہ ہی کبھی آپ کی کسی پوسٹ پر اس آئی ڈی سے کوئی کمنٹ یا لائک آیا ہوگا۔ آپ کے پاس ایسی کئی آئی ڈیز سے فرینڈ رکویسٹ بھی آتی ہوں گی جن کو آپ جانتے تک نہیں ہوں گے اور ان آئی ڈیز میں کوئی خاص مواد بھی نہیں ہوگا سوائے دو چار پروفائل پکچرز اور ایک دو کور فوٹو کے۔ تو سوال یہ ہے کہ ان آئی ڈیز کا مالک کون ہے اور یہ کس مقصد کے لیے بنائی جاتی ہیں ؟ ھمارے پاس ایسی ہی غیر ایکٹو آئی ڈیز کی سینکڑوں فرینڈ رکویسٹ آتی رہتی ہیں اور ھم ان میں سے اکثر کو ڈلیٹ کردیتے ہیں کیونکہ ھم ان کی اصلیت کو جانتے ہیں لیکن آج تو حد ہوگئی، آج ھمیں ایک "انٹیلیجنس بیورو" کے نام کی آئی ڈی سے بھی رکویسٹ آگئی۔ مزے کی بات تو یہ تھی کہ اس آئی ڈی کی فرینڈ لسٹ میں پچاس کے قریب ہمارے سوشل میڈیا کے مجاہدین بھی تازہ تازہ ایڈ ہوئے تھے، جس سے اندازہ ہوا کہ ہمارے سوشل میڈیائی دانشور بنا سوچے سمجھے سب کی فرینڈ رکویسٹ قبول کرکے خود کو دشمن کے قریب کردیتے ہیں۔ اچھی طرح یاد رکھیں، یہ آئی ڈیز دشمن کے "سلیپر سیلز" ہیں۔ یہ آئی ڈیز جعلی ہوتی ہیں، ان آئی ڈیز سے کوئی خاص ورکنگ نہیں کی جاتی صرف دو چار پروفائل تصاویر اور ایک دو کور فوٹو لگا کے آئی ڈی کو "پارک" کردیا جاتا ہے۔ جب ہزاروں سوشل میڈیا مجاہدین ایڈ کرلیے جاتے ہیں تو پھر ایسی پارک کی ہوئی آئی ڈیز کو بوقت ضرورت فوراََ "ایکٹو" کردیا جاتا ہے۔ یعنی جب ضرورت پڑے، کوئی پروپیگنڈہ پھیلانا ہو، کسی کی کردار کشی کروانی ہو، فوج یا آئی ایس آئی کو بدنام کرنا ہو، لبرلز کی مدد کرنی ہو یا گستاخان رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی طرف داری کرنی ہو تو ایسی آئی ڈیز سے کام لیا جاتا ہے۔ سب سے اہم بات یہ بھی ہے کہ ایسی آئی ڈیز سے سوشل میڈیا مجاہدین کی حرکات پر بھی گہری نظر رکھی جاتی ہے، اہم خطرناک سوشل میڈیا مجاہدین خصوصا لکھاری حضرات کی خصوصی لسٹ بنائی جاتی ہے، چپکے سے ان کی آئی ڈیز کو رپورٹنگ کے لیے اپنے ماسٹر مائنڈز کو بھیجا جاتا ہے۔ یہ کام اتنا خاموشی اور خفیہ طریقے سے ہوتا ہے کہ ہمارے سادہ دماغ سوشل میڈیا مجاہدین سمجھ ہی نہیں پاتے کہ ہو کیا رہا ہے، آئی روز اپنی آئی ڈی بند ہونے کی شکایت تو ہر کوئی کرتا ہے لیکن وہ بند کون کرواتا ہے ہم نے کبھی اس پر سوچنے کی زحمت ہی نہیں کی۔ اس قسم کی کچھ آئی ڈیز وہ بھی ہیں جو لڑکیوں کے نام سے سوشل میڈیا مجاہدین کے اکاؤنٹس میں موجود ہوتی ہیں، اکثر انباکس میں آکر پرنسل معلومات جمع کرنے کی کوشش کرتی ہیں، تصاویر اورلوکیشن معلوم کرتی ہیں اور وقت پڑنے پر بلیک میل یا قتل بھی کروایا جاتا ہے۔ یہ ایک پورا نیٹ ورک ہے جسے دشمن ممالک کی خفیہ ایجنسیاں "ففتھ جنریشن وار" کے اہم مہرے کے طور پر تحت چلا رہی ہیں، اس نیٹورک میں لڑکے، لڑکیوں کی آئی ڈیز سمیت کچھ ایسی آئی ڈیز بھی شامل ہیں جو بظاہر سوشل میڈیا مجاہدین بنے ہوئے ہیں، دو تین اسٹیٹس پاکستان اور پاک فوج کے حق میں دیکر محب وطنوں کی سوشل میڈیا ٹیمز میں داخل ہونے کی کوشش کرتے ہیں، پھر اندر کی خبریں اپنے ماسٹر مائنڈز تک پہچاتے ہیں۔ اس طرح کی آئی ڈیز کے علاوہ بہت سے پیجز اور گروپس بھی پارک کیے ہوئے ہیں جہاں لوگوں کو انگیج رکھنے کے لیے لڑکیوں کی تصاویر یا وڈیوز وغیرہ کی مسلسل پوسٹنگ کی جاتی ہے اور وقت آنے پر اپنا اصل کام شروع کردیا جاتا ہے۔ بنیادی طور پر ان پارک کی ہوئی "سیلپر سیلز" آئی ڈیز کے مندرجہ ذیل کام مقاصد ہوتے ہیں؛ ٭ جیسے ہی محرم شروع ہو، شیعہ ڈی پی اور کور لگا کر صحابہ کرام پر طبرہ شروع کردو،گالیوں اور فرقہ وارانہ آگ لگانے والی پوسٹس/وڈیوز کو مسلمانوں کے درمیان خصوصاََ سنیوں اور وھابیوں کی آئی ڈیز کے درمیان خوب شیئر کرو اور پوری کوشش کرو کہ سنی وہابی بھی گالیوں پر اتر آئیں۔ ٭ ربیع الاول شروع ہوتے ہی نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی شان گھٹانے کے لیے ان کی پیدائش کی تاریخ کو آگے پیچھے کرکے سنیوں پر لعن طعن کرو ٭ سنی وہابی اور شیعہ میں فرقہ وارانہ آگ لگانی ہو تو اسی مناسبت سے ڈی پی اور کور تبدیل کرکے نفرت انگیز تقاریر اور مواد شیئر کرنا شروع کردو ٭ لیگیوں، انصافیوں اور جیالوں میں پھوٹ ڈالنی ہو تو ان آئی ڈیز کو استعمال کرو ٭ پاک فوج اور آئی ایس آئی پر لعن طعن کرنے کے لیے فوج مخالف مواد شیئر کرنے کے لیے ان ہی آئی ڈیز کو استعمال کرو ٭ گستاخ بلاگرز کو خوب سپورٹ کرو، ان کے حق میں زیادہ سے زیادہ کمنٹس کرو، ان کی پوسٹس کو زیادہ سے زیادہ شیئر کرکے اور انہیں ہیرو بناکر پیش کرو جبکہ مسلمانوں کو تنگ نظر اور شدت پسند بناکے پیش کرو۔ ٭ آئی ایس آئی کو دہشت گرد ایجنسی ثابت کرو اور پوری دنیا میں دہشت گردی کے پیچھے آئی ایس آئی کا ہاتھ ہے کا واویلا کرو۔ ٭ اسرائیل، امریکہ اور انڈیا کی اصلیت لوگوں کو دکھانے والوں کی پاکستانی سوشل میڈیا مجاہدین کی آئی ڈیز کی لسٹ بناؤ اور انہیں رپورٹنگ کے لیے ایجنسی کے ہیڈکوارٹر بھیج دو ٭ جو لوگ یا سیاستدان پاکستان دشمنی کے ایجنڈے پر چلیں انہیں خوب سپورٹ کرو اور جو ملک کو اسلامی ریاست بنانے کا کہے اسے تنگ نظر، جاہل، شدت پسند ثابت کرو ٭ امریکہ اسرائیل اور انڈیا کی خوب تعریف کرو لیکن پاکستان کو دہشت گرد ملک کہو، مسلمانوں کو تنگ نظر اور اسلام کو دہشت گرد مذھب ثابت کرنے کے لیے مسلسل جھوٹ بولتے رہو۔ دوستو ان آئی ڈیز کے مقاصد لامحدود ہیں، یہ آئی ڈیز خاموش سلیپر سیلز ہیں، ایک ہی بندے کے پاس 20 سے 30 بلکہ شاید اس سے بھی زیادہ آئی ڈیز ہوتی ہیں اور یہ مسلسل نئی آئی ڈیز بناکے پاکستانی سوشل میڈیا مجاہدین کے درمیان گھستے رہتے ہیں۔ استعمال صرف اسی صورت کرتے ہیں جب اوپر سے کوئی احکام ملے.

متعلقہ خبریں