اعتقادات کیسے بنتے ہیں ......

2020 ,مارچ 14



زلزلے والی رات ایک ایسی خاتون نے کہ جس کو شُوگر کا مرض لاحق تھا . یہ سمجھا کہ اس کی شُوگر کم ھو گئی ھے جس کی وجہ سے اسے چکر آ رھے ھیں وە جھٹ سے اُٹھی اور دِیوار تھام کر فریج تک پہنچی کیک نکال کر اس کے دو ٹُکڑے ھی کھائے تھے کہ زلزلہ رک گیا...
ان کو یقین واثق ھو گیا کہ یہ جھٹکے واقعی شُوگر کی کمی کا نتیجہ تھے.. اب صُبح جب ان کو زلزلے کا بتایا گیا تو انہوں نے زلزلے کے وقوع کا اِنکار کر دیا،،،،
اس قوی دلیل کے ساتھ کہ پھر زلزلہ میرے کیک کھانے سے کیوں اور کیسےختم ھو گیا ؟
ایک عورت جس کا سسرال بریلوی اور میکہ دیوبندی ھے، 9 سال توحید پر ڈٹی رھی اور مزار پر جا کر اُولاد مانگنے سے اِنکار کرتی رھی،،، آخرکار شوھر کی جانب سے طلاق کی دھمکی پر گھٹنے ٹیک بیٹھی اور بابا شاہ کمال کے مزار پر حاضری دے دی ،، دو پتھروں کا سات سات چکر طواف کیا مگر قبر پر جا کر اولاد مانگنے کی بجائے اپنی توحید کے کریا کرم پر زار زار روتی رھی ،،
سسرال بھی مطمئن ھو گیا اور خاتون کو بھی اِطمینان تھا کہ کم از کم اس نے صاحب مزار سے کچھ مانگا نہیں بس وھی ظاھری اعمال بالاکراہ بجا لائی جو سُسرال والوں کو نظر آ جائیں مگر ربّ کو اس کا مزید امتحان مقصُود تھا، ،
اس کے یہاں اُولاد کی اُمید لگ گئ، ، اب ساس ایک جُوتا اٹھاتی اور ایک رکھتی کہ تم نے اپنی توحید کے چکر میں میرے بیٹے کو 10 سال اولاد سے محروم رکھا.. وە لاکھ قسمیں کھاتی کہ یہ اللہ نے دیا ھے. بابا شاہ کمال سے تو اس نے مانگا ھی نہیں تھا، مگر ساس ایک ھی بات کہتی کہ " اگر اللہ نے دیا ھے تو پہلے دس سال اللہ نےکیوں نہیں دیا ؟
خاتون نے سوال کیا تو میں نے عرض کیا کہ ساس سے پوچھو کہ ابراھیم علیہ السلام کو اسماعیل کس بابے نے دیا تھا؟ ساس نے کہا کہ ان کو بابا جی نے نہیں بلکہ اللہ نے دیا تھا،،،
میں نے کہا کہ اب ساس سے پوچھو اگر ان کو اللہ نے دیا ھے تو پھر 50 سال پہلے جوانی میں ھی کیوں نہیں دے دیا؟ اور زکریا علیہ السلام کو بھی فریادوں کے بعد بڑھاپے میں کیوں دیا جوانی میں ھی کیوں نہیں دے دیا؟ ؟
اللہ وە ھستی ھے جس سے کبھی پوچھ گچھ نہیں کی جا سکتی کہ اب دیا ھے تو تب کیوں نہیں دیا تھا رزق اولاد کی صورت ھو یا مال کی شکل میں، وقت کا تعین رب کرتا ھے اور کسی کو جوابدہ نہیں ھے
" لا یسئل عما یفعل و ھم یسئلون "
وە جو چاھے. جب چاھے کرے اس سے جواب طلبی نہیں کی جا سکتی البتہ لوگ اس کے سامنے اپنے کیئے پر جوابدہ ھونگے (الانبیاء )

متعلقہ خبریں