سعودی شہزادی امیرہ الطاویل کون ہیں اور کتنی امیر ہیں؟

2018 ,جنوری 14



ریاض: (ویب ڈیسک) شہزادی امیرہ الطاویل کا شمار عرب سے تعلق رکھنے والی ان چند مخیر شخصیات میں ہوتا ہے جو پوری دنیا میں پہچانی جاتی ہیں۔شہزادی امیرہ الطاویل سعودی عرب میں قید شہزادہ الولید بن طلال کی سابق اہلیہ ہیں۔ اپنے خیراتی کاموں کی وجہ سے انھیں پوری دنیا میں جانا جاتا ہے۔ شہزادی امیرہ نے بیرون ملک سے اپنی تعلیم مکمل کی اور اسی وقت سے انسانیت کی بھلائی کے کاموں میں دلچسپی لینا شروع کر دی۔انہوں نے اپنی ابتدائی زندگی اپنی والدہ اور نانا نانی کے ساتھ گزاری۔ تعلیم مکمل کرنے کیے بعد ان کی ملاقات سعودی شہزادے الولید بن طلال سے ایک انٹرویو کے دوران ہوئی جس کے بعد دونوں سے شادی کا فیصلہ کر لیا۔

دنیا کے امیر ترین شخص شہزادہ الولید بن طلال سے شادی کے بعد امیرہ الطاویل کو دنیا بھر میں بے پناہ شہرت ملی۔ اگرچہ دونوں کی عمروں کے درمیان بہت زیادہ فرق تھا لیکن اس کے باوجود لوگوں نے ان کی جوڑی کو پسند کیا۔

شہزادی امیرہ نے شادی کے بعد بھی اپنے خیراتی کاموں کو جاری رکھا حتیٰ کہ الولید بن طلال سے طلاق کے باوجود انسانیت کی خدمت کے جذبے میں کمی نہ آنے دی۔ امیرہ الطاویل سعودی عرب میں خواتین کی آزادی کا استعارہ سمجھی جاتی ہیں۔

شہزادی امیرہ نے نے بہت شاہانہ زندگی بسر کی لیکن پرنس الولید سے طلاق کے بعد بھی ان کی شہرت کو کوئی نقصان نہیں پہنچا۔ ایک انٹرویو میں شہزادہ الولید نے خود بتایا تھا کہ اگرچہ دونوں اپنی شادی شدہ زندگی کو آگے نہیں بڑھا سکے لیکن اس کے باوجود دونوں ایک دوسرے کی بہت عزت کرتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: سعودی شہزادے الولید بن طلال کو جیل منتقل کر دیا گیا

شہزادہ الولید سے طلاق کے بعد بھی شہزادی امیرہ کنگڈم ہولڈنگ کمپنی کی چیئرپرسن کے عہدے پر براجمان ہیں۔ خیال رہے کہ اس کمپنی کا شمار دنیا کی بڑی تعمیراتی کمپنیوں میں ہوتا ہے، جس کے اثاثے کھربوں ڈالرز ہیں۔

اس کے علاوہ شہزادی امیرہ ابھی تک الولید بن طلال فاؤنڈیشن کی وائس چیئرمین بھی ہیں۔ اس کے علاوہ انہوں نے الولید بن طلال ولیج فاؤنڈیشن کی بنیاد بھی رکھی تھی جس میں برکینا فاسو سے تعلق رکھنے والے یتیموں اور ضرورت مند افراد کی مدد کی جاتی ہے۔ شہزادی امیرہ نے اسلامی تعلیمات کے فروغ کیلئے ایک سینٹر بھی قائم کیا ہے۔

متعلقہ خبریں