پہلی تھپکی !

2021 ,دسمبر 30



دوسروں کو پہلی تھپکی لازمی دیں کیونکہ انسان سب کچھ بھول جاتا ہے لیکن پہلی تھپکی نہیں بھولتا۔ اس پہلی تھپکی میں جو جادو ہے وہی انسان کو کامیاب بناتا ہے جبکہ پہلا مذاق ناکام بنا دیتا ہے میرے ادبی و صحافتی سفر میں مجھے بہت سے لوگ ملے ،کئی ایک سے میرا مسلسل رابطہ ہے ،بہت سے اب یاد نہیں رہے ،کئی لوگوں کے نام بھول چکا ہوں مگر چہرہ شناسا ہے لیکن اس سب کے باوجود میں ان تین افراد کو نہیں بھول پایا جنہوں نے میری پہلی تحریر پر مجھے پہلی تھپکی دی تھی حالانکہ ان کا تعلق تین مختلف شہروں سے ہے ۔ ان میں سے فاروق انجم فیصل آباد رہتے ہیں ،کے ایم خالد اسلام آباد ہیں اور حافظ مظفر محسن لاہور ہیں ۔ اس پہلی تھپکی کا جادو مجھے آج بھی اپنے حصار میں لیے رہتا ہے ۔ میں جب بھی کچھ لکھنے لگتا ہوں مجھے یہ تین محسن یاد آتے ہیں اور میں سوچتا ہوں کہ میں شاہکار لکھ لوں گا ۔ ممکن ہے یہ تینوں میری حوصلہ شکنی کرتے اور میں دوسری تحریر لکھنے کا ارادہ بدل لیتا ۔ پہلی تضحیک اور پہلی تھپکی اپنا اثر لازمی چھوڑتے ہیں اس لیے کوشش کریں کسی کی تضحیک کی بجائے اسے تھپکی دیں پہلے دن کوئی بڑا آرٹسٹ نہیں بن جاتا ،حقیقی ٹیلنٹ ہمیشہ اپنا سفر طے کرتا ہے ۔ یہ سفر کچے پن سے پختگی کی جانب جاتا ہے اس لیے نئے لوگوں کو سینئرز کے معیار پر مت پرکھیں آج آپ کی ایک تھپکی کل کسی کو قومی ہیرو بنا سکتا ہے ۔اس لیے پہلی تھپکی دینے میں کنجوسی مت کریں۔ نئے لوگوں کی اصلاح ضرور کریں لیکن تضحیک نہیں ۔ تضحیک اور اصلاح کا فرق ہم سب جانتے ہیں(سید بدر سعید)

متعلقہ خبریں