ایک فرنچ خاتون کا پاکستانی نوجوان کے ساتھ ایسا مکالمہ جس کے بارے میں جان کر آپ کو اس پاکستانی نوجوان پر فخر ہو گا

2020 ,مئی 1



فرانس کی ایک فیکٹری میں کام کرنے والے پاکستانی کے ساتھ خواتین اور مرد حضرات بھی کام کرتے ہیں
فیکٹری میں 50 سال کی ایک فرنچ خاتون اک دن اسے کہنے لگی کہ سنا ہے تم پاکستان کے لوگ عورتوں کے حقوق نہیں دیتے انہیں گھر میں بند رکھتے ہو اور کام بھی نہیں کرنے دیتے
نوجوان نے لیڈی سے سوال کیا کہ آپ کو کام کرتے کتنا عرصہ ہو گیا
جواب ملا جب میں 18 سال کی تھی تب سے نوکری کر رہی ہوں
جواب میں پاکستانی ماں کے بیٹے نے کہا کہ آپ گھر کا کام بھی کرتی ہیں جاب بھی کرتی ہیں اور آپ کی عمر بھی کافی ہو گئی جبکہ ہمارے ہاں غالب اکثریت کے گھرانوں میں جب بیٹی پیدا ہوتی ہے تو بچپن سے لے کر جب تک اس کی شادی ہوتی ہے اس وقت تک اس کے اس لڑکی کے والد اور بھائی اپنی اس بیٹی کو اللہ کی رحمت قرار دیتے ہوئے اپنی آنکھوں کا تارا بنا کر رکھتے ہیں اس کی عزت و عصمت کی پوری طرح حفاظت کرتے ہیں اس کی ضرورتیں اور فرمائشیں پوری کرتے ہیں اور جب اس کی شادی کر دیتے ہیں تو وہ اپنے شوہر کی ذمہ داری بن جاتی ہے اب اس کی تمام خواہشات اور ضروریات اس کا شوہر پوری کرتا ہے اور جب وہ آپ کی عمر میں پہنچ جاتی ہے تو تب اس کے بیٹے اور بیٹیاں اس کو اپنی جنت کہہ کے پکارتے ہیں اور اپنے حالت اور پوزیشن کے مطابق اس کی خدمت کرتے ہیں
ہمارے ہاں اس عمر میں عورت کو آپ کی طرح اس عمر میں کام کرنے کی ضرورت نہیں پڑتی لہذا کیا اسے حقوق نہ دینا کہتے ہیں اور
کیا گھر میں بند رکھنا کہتے ہیں یہ ہمارا مسلم معاشرہ ہے یہ ہمارے دین کی تعلیمات اور تربیت ہے اور یہی ہمارے رسم و رواج ہیں
فیکٹری کا وقت ختم ہو گیا اور وہ خاتون چلی گئی
دوسرے دن اپنی ڈیوٹی پر آ کر اس خاتون نے بتایا کہ وہ ساری رات سو نہیں سکی کہ کیا کوئی ایسا معاشرہ بھی ہے
جہاں عورت کو پیدائش سے لے کر موت کے وقت تک اتنی عزت دی جاتی ہو...

متعلقہ خبریں