صحافی حضرات اور خصوصی طور پر شوقیہ موبائل صحافی حضرات ہوشیار

2022 ,فروری 23



تمام صحافی حضرات اور خصوصی طور پر شوقیہ موبائل صحافی حضرات ہوشیار ہوجائیں اب Fake نیوز پر 5 سال قید اور جرمانہ ہوگا عدالت 6 ماہ میں کیس کا فیصلہ کرنے کی پابند ہوگی ناقابل ضمانت اور قابل دست اندازی پولیس مقدمہ ہوگا جس میں پولیس گرفتاری بھی کرسکے گی وفاقی حکومت کی جانب سے کل کابینہ نے منظوری دی جس کے بعد آج آرڈیننس نافذ ہوگیا اخبار و چینلز کے ساتھ ساتھ سوشل میڈیا پر بھی اب احتیاط کریں کسی کی تضحیک یا کسی کے خلاف پوسٹ لگانے سے پہلے ہزار بار سوچیں اب لمحات لگیں گے آپ کو جیل کی سلاخوں تک جانے میں قانون پر خود بھی عملدرآمد کریں اور اپنے گروپس میں بھی اس بات کو یقینی بنائیں کہ کوئی اور فیک نیوز یا کسی کے خلاف نفرت انگیز مواد شیئر نہ کرے In fact This will effect badly to the gutter media is called social garbage by the non media entities like so called ancor persons n non professional bloggers n mushroom uncivilised n uneducated non journalist.

متعلقہ خبریں