اللہ کی۔۔۔۔۔ اللہ کے بنیﷺ کی۔۔۔۔۔ صحابہ کرامؓ۔۔۔۔۔اور اللہ کے نیک بندوں کی پسندیدہ تین چیزیں۔۔۔۔۔۔۔

2017 ,مارچ 17



لاہور(مہرماہ رپورٹ):ایک روز آپ صلی الله علیہ وسلم نے اپنے صحابہ اکرام کے درمیان تشریف آوری کے دوران حضرت ابوبکر سے پوچھا: ابوبکر آپ دنیا میں کیا چیز پسند کرتے ہيں؟۔۔

انھوں نے جواب میں کہا حضور تین چیزیں پسند کرتا ہوں۔

اول: آپ کے درمیان بیٹھا رہوں۔

دوسرے: آپ کو دیکھتا رہوں۔

تیسرے: اپنے مال کو آپ پر خرچ کروں۔

پھر حضور صلی الله علیہ وسلم نے حضرت عمر سے دریافت کیا کہ عمر آپ کیا پسند کرتے ہيں؟

حضرت عمر نے جواب میں کہا : حضور تین چیزیں پسند کرتا ہوں۔

اول: نیکی کا حکم دوں اگرچہ کے سری طور پر ہو۔

دوسرے: برائی سے روکتا رہوں اگرچہ سرعام ہو۔

تیسرے: حق بات کہوں اگرچہ سننے والوں کو کڑوی لگے۔

اور پھرحضورﷺ نے حضرت عثمانؓ سے دریافت کیا کہ عثمان! آپ کیا پسند کرتے ہیں؟۔

حضرت عثمان نے جواب دیا : حضور تین چیزیں پسند کرتا ہوں۔

اول: لوگوں کو کھانا کھلاؤں۔

دوسرا:ا سلام کو پھیلاؤں۔

تیسرا:رات میں ایسے وقت نماز پڑھوں جب لوگ نیند کی آغوش میں ہوں۔

اس کے بعد حضور صلی الله علیہ وسلم نے حضرت علیؓ سے دریافت کیا کہ علی! آپ کیا پسند کرتے ہيں؟۔

حضرت علیؓ نے جواب دیا کہ حضور تین چیزیں پسند کرتا ہوں۔

اول: مہمان نوازی کروں۔

دوسرا: موسم گرما  میں روزے رکھوں ۔

 تیسرا:دشمن پر تلوار سے وار کروں۔

پھر آپ صلی الله علیہ وسلم نے حضرت ابوذرغفاریؒ سے دریافت فرمایا : ابوذر آپ کیا پسند کرتے ہو؟ ۔

حضرت ابوذر غفاری نے جواب دیا: حضور میں دنیا میں تین چیزیں پسند کرتا ہوں

اول: بھوک۔۔۔

دوسرا:بیماری ۔۔۔۔

 تیسرا:موت۔۔۔۔

آپ صلی الله علیہ وسلم نے ان سےسبب پوچھتے ہوئے کہا آپ ان چیزوں کو کیوں پسند کرتے ہو؟ ۔۔۔۔۔

انھوں نے جواب دیا کہ حضورﷺ بھوک اس لیئے عزيز ہے کہ اس کے ذریعے میرا دل نرم ہوتا ہے اور بیماریاس لیئے محبوب ہے کہ اس کے ذریعے میرے گناہ معاف ہوتے ہیں اورموتاس وجہ سے عزيز ہے کہ اس کے ذریعے میں اپنے پروردگارسے ملوں گا۔۔۔۔

اس کے بعد آپ صلی الله علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا : میرے لیئے تمہاری دنیا سے تین چیزیں پسند کروائی گئی۔

اول :خوشبو۔۔۔

دوسری: نیک عورتیں۔۔۔

  تیسری: میرےآنکھوں کی ٹھنڈک نماز میں رکھی گئي ہے۔ ۔۔۔

اسی اثناء حضرت جبریل تشریف لاتے ہیں اور فرماتے ہیں مجھے تمہاری دنیا سے تین چیزیں پسند ہيں۔۔

اول : پیغام کو پہنچانا۔

دوسرا: امانت کو ادا کرناؕ

تیسرا:مساکین سے محبت کرنا۔۔۔

پھر حضرت جبرئيلؑ آسمانوں کی جانب لوٹتے ہیں اور دوبارہ زمین پر واپس آتے ہیں اور فرماتے ہيں کہ حضور الله رب العزت آپ کو سلام کہتے ہيں: اور ارشاد فرماتے ہيں: کہ الله رب العزت کو تمہاری دنیا سے تین چیزیں پسند ہيں:۔۔۔

اول: ایسی زبان جو الله کی یاد سے تر ہو،

دوسرا: ایسا دل جو الله سے ڈرنے والا ہو

اور تیسراایسا جسم جو مصائب اور آزمائشوں میں صبر کرنے والا ہو۔
صلی اللہ علیہ والہ وصحبہ وبارک وسلم

متعلقہ خبریں