قلبی اطمینان

2019 ,اکتوبر 24



کریم بلاک گاڑی سگنل پر رکی تو ۔۔۔۔ ایک بچی آکر شیشہ صاف کرنے لگی۔۔۔۔وہ شیشہ صاف کرچکی تو دوست نے جیب سے سو روپیہ نکال کر دیا۔۔۔۔
اس بچی نے پیسے والا ہاتھ پیچھے کرتے ہوئے۔۔۔۔۔ کن اکھیوں سے پہلے اگلی گاڑی کے پاس کھڑے بندے کو دیکھا اور پھر۔۔۔۔۔ دوست کے قریب ہو کر ہاتھ سے اشارہ کرتے ہوئے بولی۔۔۔۔
انکل یہ مجھے دے دیں۔۔۔۔
ہم دونوں کی نظر اس کے اشارہ کی جانب گئی تو۔۔۔۔ ڈیش بورڈ پر ۔۔۔۔دوست کی بیٹی کی کہانی کی چھوٹی سے کتاب رکھی تھی۔۔۔۔۔
۔اسی دوران سگنل کھلنے پر دوست نے بغیر کچھ دئے گاڑی آگے بڑھائی۔۔۔۔۔ تو میں نے کہا کیا کررہے ہو بچی کو پیسے دو۔۔۔گاڑی کا رخ ہماری منزل کے بجائے کریم بلاک مارکیٹ کی جانب ہوگیا تھا۔۔۔۔۔وہ بچی معصوم سی نظروں سے گاڑی کو آگے بڑھتا دیکھ رہی تھی۔۔۔۔
دوست نے سگنل کراس کر کے ۔۔۔۔۔ گاڑی سائیڈپر روکی اور اتر کر اس بچی کے پاس چلا گیا۔۔۔۔ کچھ دیر میں وہ بچی اور اس کا باپ گاڑی کی پچھلی سیٹ پر تھے۔۔۔۔۔
گاڑی کچھ آگے بڑھی اور پہلی مارکیٹ کراس کرنے کے بعد۔۔۔۔۔ دوسری مارکیٹ میں داخل ہوگئی۔۔۔۔۔پھر دوست نے بچی کو مختلف کتابیں۔۔۔۔۔ڈرائنگ بکس کلر سمیت مختلف چیزیں دلوائیں۔۔۔۔۔
اس دوران اس نے فون پہ کسی سے بات کی اور ۔۔۔۔ لڑکی کے باپ کو کچھ سمجھانے لگا۔۔۔۔۔انھیں واپس اسی سگنل پہ چھوڑا اور پھر میرے آفس کا رخ کرلیا۔۔۔۔
اس نے بچی کا داخلہ اپنی علامہ اقبال ٹائون میں بیوی کے اسکول میں کرایا اور۔۔۔۔۔ بچی جو گاڑی اسکرین صاف کرکے تین ہزار روپے کماتی تھی۔۔۔۔۔وہ بچی کے باپ کو دینے کا وعدہ کیا ۔۔۔۔۔اس شرط پہ کہ جب تک بچی اسکول آتی رہے گی اسے پیسے ملتے رہیں گے۔۔۔۔۔
پتا نہیں اس نے صیح کیا یا غلط۔۔۔۔۔۔ بہرحال بچی کی آنکھوں کی چمک نے ضرور اسے۔۔۔۔۔۔ قلبی اطمینان دیا ہوگا ۔۔۔۔۔ جو آجکل ناپید ہے۔۔۔۔۔

متعلقہ خبریں