وزیراعظم مسئلہ کشمیر کو جواز بنا کر پاناما ایشو کو دبانا چاہتے ہیں،عمران خان نے مشترکہ اجلاس کا بائیکاٹ کر دیا

تحریر: فضل حسین اعوان

| شائع اکتوبر 04, 2016 | 19:36 شام

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)عمرا ن خان نے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس کا بائیکاٹ کر دیا، کل کشمیر میں بھارتی مظالم اور لائن ا?ف کنٹرول پر بھارتی جارحیت کے خلاف پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں تحریک انصاف سے کوئی شرکت نہیں کرے گا۔عمران خان کہتے ہیں کہ نوازشریف کی بطور وزیراعظم کوئی قانونی حیثیت نہیں، پارلیمنٹ کے اجلاس میں شرکت کرکے ان کے وزیراعظم ہونے کی توثیق نہیں کر سکتے،تحریک انصاف کے اہم رہ نماﺅں کا اجلاس ہوا بنی گالہ اسلام آباد میں اور فیصلہ ہو گیا پارلیمنٹ کے بائیکاٹ کا۔چیئرمین تحریک انصاف عمران خان
کا کہنا ہے کہ وزیراعظم مسئلہ کشمیر کو جواز بنا کر پاناما ایشو کو دبانا چاہتے ہیں، تحریک انصاف پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سمیت آئندہ قومی اسمبلی یا سینیٹ کے کسی اجلاس میں شریک نہیں ہوگی۔عمران خان نے وزیراعظم کو دو آپشن بھی دے دیے۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ رائیونڈ مارچ کے دوران قومی سلامتی پر حکومت اور فوج کے ساتھ کھڑے ہونے کا اعلان کر چکے ہیں، پارلیمانی رہنماﺅں کے اجلاس میں مشترکا قرارداد کی بھی حمایت کی۔انہوں نے کہا کہ رائیونڈ کی تقریر کے دوران میں نے مودی کو جو پیغام دیا وہ سب نے سنا،تحفظات کے باوجود پارلیمانی رہنماﺅں کے اجلاس میں شاہ محمود کو بھیجا یہ پیغام دینے کیلئے کہ کشمیر اور قومی سلامتی پر ہم سب ایک ہیں۔عمران خان نے 6 اکتوبر کو تحریک انصاف کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کا اجلاس طلب کر لیا ہے جس میں آئندہ کے لائحہ عمل کے حوالے سے اہم فیصلے متوقع ہیں۔