خواجہ آصف کی دھمکی کام کر گئی،اسرائیل نے اپنے بیان کو جعلی قراردیدیا

تحریر: فضل حسین اعوان

| شائع دسمبر 26, 2016 | 05:07 صبح

 

 

اسلام آباد (مانیٹرنگ) اسرائیل نے وزیر دفاع خواجہ آصف کی جوابی دھمکی کے بعد پاکستان پر ایٹمی حملہ کے بیان کو جعلی قرار دے ڈالا۔ ایک امریکی ویب سائٹ اے ڈبلیو نیوز نے بیس دسمبر کو سابق اسرائیلی وزیر دفاع کا یہ بیان چھاپا پاکستان نے شام میں اپنی فوج بھجوائی تو پاکستانی فوج پر ایٹمی حملہ کرکے اسے تباہ کر دیا جائے گا۔ وزیر دفاع خواجہ آصف نے یہ بیان علم میں آنے پر ایک ٹویٹ میں کہا ’’اسرائیل کو علم ہونا چاہئے پاکستان بھی ایک ایٹمی طاقت ہے‘‘ ا

مریکہ اور دیگر مغربی ذرائع ابلاغ میں خواجہ آصف کا ٹویٹ آنے کے بعد تہلکہ برپا ہو گیا اور تبصرے کئے جا رہے ہیں خواجہ آصف نے ایک جعلی بیان پر اسرائیل کو ایٹمی حملہ کی دھمکی دے دی ہے۔ اگرچہ پاکستانی وزیر دفاع نے کوئی دھمکی نہیں دی اور محض یہ باور کرایا پاکستان بھی ایٹمی طاقت ہے لیکن مذکورہ ویب سائٹ کا کوئی ذکر نہیں کر رہا جس نے اسرائیلی وزیر دفاع کا وہ بیان چلایا جسے اب جعلی قرار دیا جا رہا ہے۔ قابل ذکر امر یہ ہے پاکستان نے کسی بھی سطح پر شام میں اپنی فوج بھجوانے کا کوئی اعلان نہیں کیا بلکہ پاکستان کا اعلانیہ موقف ہے فریقین باہمی مذاکرات سے شام کے بحران کا تصفیہ تلاش کریں لیکن اس کے باوجود ایک بار پھر پاکستان کو شام کے بحران میں گھسیٹنے کی کوشش کی گئی ہے، خیال رہے مذکورہ بالا ویب سائٹ جھوٹی خبریں چھاپنے کیلئے بھی مشہور ہے اوراسی ویب سائٹ نے یہ خبر بھی چھاپی تھی کہ اردن کے شاہ عبداللہ نے اپنی ملکہ رانیہ کو قتل کر دیا ہے جبکہ ملکہ رانیہ زندہ ہیں۔ بی بی سی کے مطابق منگل کے روز اے ڈبلیو ڈی نامی ویب سائٹ پر ایک خبر شائع ہوئی جس میں کہا گیا ’’اسرائیلی وزیر دفاع نے کہا اگر پاکستان نے کسی بھی بہانے سے شام میں زمینی فوج بھیجی تو ہم اس ملک کو ایٹمی حملے میں تباہ کردیں گے۔ اس خبر کے مطابق اسرائیل کے سابق وزیر دفاع موشے یالون نے پاکستان کو دھمکی دی۔ تاہم اسرائیلی وزارت دفاع نے ٹویٹ میں خواجہ آصف کو ٹیگ کرتے ہوئے کہا ہے جو بیان سابق وزیردفاع یالون کے حوالے سے نشر کیا گیا ہے وہ کبھی دیا ہی نہیں گیا۔ ایک اور ٹویٹ میں اسرائیلی وزارت دفاع نے ایک بار پھر خواجہ آصف کو ٹیگ کرتے ہوئے کہا ہے خواجہ آصف جس رپورٹ کا ذکر کررہے ہیں وہ بالکل من گھڑت ہے۔ واضح رہے موشے یالون اسرائیل کے وزیر دفاع تھے ان کو عہدے سے مئی میں ہٹا دیا گیا تھا اور ان کی جگہ لائیبرمین کو مقرر کیا گیا ہے۔