ذہانت کا امتحان

2019 ,اکتوبر 3



جب نواز شریف اور کلنٹن ملے تو کھانے کے بعد کلنٹن نے نواز شریف کو بتایا “میں تو اپنی کابینہ کے ممبران کی اہلیت و قابلیت کا امتحان لے کر انہیں منتخب کرتا ہوں “.
یہ سن کر نواز شریف بڑے حیران ہوئے پوچھا “آپ ان کی اہلیت و قابلیت کا امتحان کیسے لیتے ہیں ؟”
بل کلنٹن نے کہا “ایک منٹ میں دکھا دیتا ہوں .” *کلنٹن نے میڈیلین البرائٹ کو بلایا اور کہا “میڈیلین مجھے بتاؤ وہ کون ہے جو آپ کے والد کی اولاد ہے اور آپ کی ماں کا بچہ ہے مگر آپ کا نہ بھائی لگتا ہے نہ بہن ۔؟

” میڈیلین نے کہا “بہت آسان ہے وہ میں ہوں “.

کلنٹن نے میڈیلین کی تعریف کی . نواز شریف بہت متاثر ہوئے جب اسلام آباد آئے تو امریکی کابینہ کے ارکان کی ذہانت کے بہت متعرف تھے .

انہوں نے اپنی کابینہ کی ذہانت چیک کرنے کے لئے سرتاج عزیز کو بلایا اور کہا “سرتاج عزیز بتاؤ وہ کون ہے جو آپ کے والد کی اولاد ہے اور آپ کی ماں کا بچہ ہے مگر آپ کا نہ بھائی لگتا ہے نہ بہن۔؟
” سرتاج عزیز نے سوچا ، جواب نہ بن پڑا تو کہا ” مجھے سوچ بچار کے لئے 24 گھنٹے عنایت کر دیں ” نواز شریف نے کہا “پرانے ساتھی ہو ، تمہیں یہ مہلت دے دیتا ہوں۔
” سرتاج عزیز دیکھنے میں بھی “پرانے”ساتھی ہی لگتے ہیں – پھر ان کا سر بھی تاج لگتا ہے . بہرحال انہوں نے سوچا، جواب نہ بن پڑا…
انہوں نے کیبنٹ سیکرٹری ، چیف سیکرٹری ، اور جائنٹ سیکریٹری کو بلوایا – پورا بجٹ تیار ہو گیا مگر جواب نہ ملا – 20 گھنٹے گزر گئے .
سرتاج عزیز بڑے فکرمند ہوئے . صرف چار گھنٹے بچے تھے . انہوں نے بلآخر جارج فرنینڈ س کو فون کیا اور پوچھا ”
وہ کون ہے جو آپ کے والد کی اولاد ہے اور آپ کی ماں کا بچہ ہے مگر آپ کا نہ بھائی لگتا ہے نہ بہن؟
“. جارج فرنینڈس نے کہا “بہت آسان ، وہ میں ہوں۔
“. سرتاج عزیز خوش ہوئے . انہوں نے نواز شریف کو فون کیا کہ وزیر اعظم صاحب ، مجھے اس سوال کا جواب مل گیا ہے اور_ جواب ہے “جارج فرنینڈس ”
اس پر نواز شریف نے ناراض ہوتے ہوئے کہا
“یہ جواب غلط ہے ، صحیح جواب ہے میڈیلین البرائٹ”

متعلقہ خبریں