روبوٹ امدادی کارروائیوں میں حصہ لینگے

2016 ,دسمبر 10



میامی (شفق ڈیسک) ماہرین نے زلزلوں اور حادثات میں گر جانیوالے مکانات اور عمارتوں میں امدادی کارروائیوں اور انسانوں کی شناخت کرنیوالا ایک ایسا روبوٹ بنایا جو بہت تیزی سے پھدکتا رہتا ہے اور رکاوٹوں کو عبور کرتے ہوئے ایسی جگہوں پر بھی جاسکتا ہے جہاں کوئی نہیں پہنچ سکتا۔ اس روبوٹ کو سالٹو کا نام دیا گیا ہے جو ایک سیکنڈ سے کم وقت میں ایک میٹر تک کی چھلانگ لگا سکتا ہے۔ سالٹو ایک جست میں 3 میٹر کا فاصلہ بھی طے کرسکتا ہے۔ یونیورسٹی آف کیلیفورنیا برکلے کے سائنسدانوں نے اس روبوٹ کو تیار کیا ہے۔ انکا کہنا ہے کہ روبوٹ 0.58 سیکنڈ میں ایک میٹر کی جست بھر سکتا ہے اور فوراً دوسری جمپ کیلئے تیار ہو جاتا ہے۔ اس طرح یہ عمودی طور پر 1.75 میٹر کی جمپ لگاسکتا ہے اور یہ ریکارڈ آج تک کسی روبوٹ کو نصیب نہیں ہوا۔ روبوٹ کا وزن صرف 100 گرام ہے اور اسکا پورا نام سالٹوٹوریل، لوکوموشن آن ٹرین آبسٹیکلز ہے۔ روبوٹ ایک مقام سے دوسرے مقام پر جست لگا کر بلند تر بلند ہو جاتا ہے۔ اسکے علاوہ یہ تیزی سے ملبے اور رکاوٹوں کے اندر گھس کر معلومات جمع کر سکتا ہے۔ اس روبوٹ کو ایک ٹوٹی ہوئی عمارت کے ملبے پر آزمایا گیا ہے۔ روبوٹ اتنا چھوٹا ہے کہ یہ کسی بھی انسان کی براہِ راست مدد نہیں کرسکتا لیکن اس میں سینسر لگا کر کسی پھنسے ہوئے شخص کو بچایا ضرور جاسکتا ہے۔ اس روبوٹ کی بیٹری مختصر ہے اور یہ صرف چند منٹ ہی چل سکتا ہے۔ یہ جتنی اونچی چھلانگ لگائے گا بیٹری اتنی ہی زیادہ خرچ ہوگی۔ اب ماہرین اس میں توانائی اور بیٹری کو بہتر بنانے کی کوشش کررہے ہیں۔

متعلقہ خبریں