مولوی کی تعریف

2017 ,ستمبر 12



ﻣﻮﻟﻮﯼ ....... ﮔﻮﺷﺖ ﭘﻮﺳﺖ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﭘﻼﺳﭩﮏ ﺍﻭﺭﻟﻮہے ﺳﮯ ﺑﻨﯽ ﺍﺱ ﭼﯿﺰ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ہے ﺟﺲ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ہے ﻧﮧ ﺣﺎﺟﺖ ,ﮐﻮﺋﯽ ﺧﻮﺍہش ہے ﻧﮧ ﺗﻤﻨﺎ ,ﮐﻮﺋﯽ ﺁﺭﺯﻭ ہے ﻧﮧ ﺧﻮﺍﺏ ﺟﺲ ﮐﺎ ہر ﮐﺎﻡ ﺩﻡ ﺍﻭﺭہر ﺿﺮﻭﺭﺕ ﺩﺭﻭﺩ ﺳﮯ ﭘﻮﺭﯼ ہوﺟﺎﺗﯽ ہے ﺟﺲ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﭼﻮﻟہے ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺗﻨﺨﻮﺍﮦ ﮐﯽ نہیں ﮐﺮﺍﻣﺖ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ہوﺗﯽ ہے ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺭﻗﻢ ﮐﯽ ﻧہیں ﺑﺲ ﺍﯾﮏ ﻋﺪﺩ ﭼﻒ ﮐﺎﻓﯽ ہے ﺟﺲ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﻖ ﻧہیں ﺟﺲ ﻧﮯ ﺁﺝ ﮐﮯ ﺍﺱ ﻣہنگاﺋﯽ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺻﺮﻑ پانچ ﯾﺎ چھ ﮬﺰﺍﺭﻣﯿﮟ ﮬﻤﺎﺭﯼ ﻧﻤﺎﺯﯾﮟ ﺑﮭﯽ ﭘﮍﮬﺎﻧﯽ ہیں ۔ ﺍﺫﺍﻧﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﻨﯽ ہیں ﺟﻨﺎﺯﮮ ﺑﮭﯽ ﺍﭨﮭﺎﻧﮯ ہیں ﻧﮑﺎﺡ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻭﺍﻧﮯ ہیں ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﻗﺮﺍﻥ ﺑﮭﯽ ﺳﮑﮭﺎﻧﺎ ہے ہمیں ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺑﮭﯽ ﺑﺘﺎﻧﮯ ہیں ﻭﻋﻆ ﻭ ﺧﻄﺎﺑﺖ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﯽ ہے ﻗﺮﺁﻥ ﻭﺳﻨﺖ ﺑﮭﯽ ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﯽ ہے ﮐﻮﺋﯽ ﭘﯿﺪﺍ ہو ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺫﺍﻥ ﺑﮭﯽ ﮐہنی ہے ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺮﺭﺭہا ہو ﺍﺳﮯ ﮐﻠﻤﮯ ﮐﯽ ﺗﻠﻘﯿﻦ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﯽ ہے ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ہو ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺩﻋﺎﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﯽ ہے ﮐﻮﺋﯽ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ہو ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺩﻡ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﺎ ہے ﮐﻮﺋﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﻃﻼﻕ ﺩﮮ ﺩﮮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺑﮭﯽ ﻧﮑﺎﻟﻨﺎ ہے . ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺑﭽﮧ ﮈﺭﺗﺎ ہو ﺍﺱ ﮐﺎ ﮈﺭ ﺑﮭﯽ ﻧﮑﺎﻟﻨﺎ ہے ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﻣﻮﺕ ﺗﮏ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﺑﮍﮮ ﺍﻭﺭﺍﮬﻢ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﻭﻣﻮﺍﻗﻊ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﻧﮯ ﻧﻤﭩﺎﻧﮯ ہیں ﻗﺮﺁﻥ ﻭﺣﺪﯾﺚ ﮐﻮ ﺍﻏﯿﺎﺭﮐﮯ ﺣﻤﻠﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﭽﺎﻧﺎ ہے , ﺷﺮﯾﻌﺖ ﻭﻃﺮﯾﻘﺖ ﮐﻮ ﻏﺪﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﻣﻼﻭﭦ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﭽﺎﻧﺎ ہے ﺩﯾﻦ ﮐﯽ ﺟﻐﺮﺍﻓﯽ ﺳﺮﺣﺪﻭﮞ ﮐﯽ ﺣﻔﺎﻇﺖ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﯽ ہے , ﺍﺳﻼﻡ ﮐﮯ ﺩﺍﺧﻠﯽ ﻓﺘﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺩﻓﺎﻉ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﺎ ہے ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺳﯽ ﭘﺮ ﺑﺲ نہیں ہم ﻧﮯ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮔﮭﺴﺎﻧﯽ ہیں , ﻃﻌﻨﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﻨﮯ ہیں ﻃﻨﺰ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﻧﮯ ہیں ﮬﺮﻭﺍﻗﻌﮧ ﮐﺎ ﻗﺼﻮﺭﻭﺍﺭﺑﮭﯽ ﭨﮭﺮﺍﻧﺎ ہے ﻣﻮﻟﻮﯼ ﭘﺮ ﺗﺮﻗﯽ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﻟﺰﺍﻡ ﺑﮭﯽ ﻟﮕﺎﻧﺎ ہے ﻗﺮﺁﻥ ﻭﺣﺪﯾﺚ ﺳﯿﮑﮭﻨﮯ ﺳﮑﮭﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺳﮯ ﮬﻢ ﺳﺎﺋﻨﺴﯽ ﺍﯾﺠﺎﺩﺍﺕ ﺍﻭﺭﺗﺮﻗﯽ ﮐﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺑﯿﭩﮭﮯ ہیں ﺁﺝ ﺗﮏ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﮐﺎ ﺑﺤﺮﺍﻥ ﺁﻧﮯ ﺩﯾﺎ ﺍﺱ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﻧﮯ ؟ ﺁﺝ ﺗﮏ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺴﻠﮧ ﺍﯾﺴﺎ ہے ﺟﺲ ﮐﺎ ﺷﺮﻋﯽ ﺣﻞ ﻗﺮﺁﻥ ﻭﺳﻨﺖ ﺳﮯ ﻧﮧ ﻧﮑﺎﻻ ﮬﻮ ؟ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﻻﺟﻮﺍﺏ ﮬﻮﺍ ؟ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺟﺲ ﮐﺎﻡ ﮐﺎ ﺑﯿﮍﮦ ﺍﻭﺭﭨﮭﯿﮑﮧ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ہے ﮐﯿﺎ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﮐﻤﯽ ہے؟ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺗﻮ ﺁﺝ ﺑﮭﯽ ﻣﻔﺴﺮ ﯾﻦ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺭہاہے ﺍﻣﺖ ﮐﻮ ﻣﺤﺪﺛﯿﻦ ﺩﮮ ﺭہاہے ﺧﻄﺒﺎﺀ ﻭﻋﻈﺎﺀ و ﺻﻠﺤﺎﺀ ﺷﺮﻓﺎﺀ ﮐﺲ ﻓﻦ ﻣﯿﮟ ﺭﺟﺎﻝ ﮐﯽ ﮐﻤﯽ ﮐﯽ ہے ﻣﻮﻟﻮﯼ ﻧﮯ ؟ ہر ﺩﻭﺭﮐﯽ ہر ﺿﺮﻭﺭﺕ ﭘﻮﺭﯼ نہیں ﮐﯽ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﻧﮯ؟ ﻟﯿﮑﻦ نہیں ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺩﮬﺸﺖ ﮔﺮﺩ ہے . ﭘﮭﺮﺑﮭﯽ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺗﺸﺪﺩ ﭘﺴﻨﺪ ہے ﺍﮔﺮﺳﺎﺋﻨﺴﯽ ﺗﺮﻗﯽ نہیں ہوﺭہی ﺗﻮ ﻗﺼﻮﺭﻭﺍﺭﻣﻮﻟﻮﯼ ہے ﺍﻣﻦ نہیں ہے ﺗﻮﻏﻠﻄﯽ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﮐﯽ ہے ﻣﻮﻟﻮﯼ ﮐﻮﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺗﻮ ﺑﺎﻟﮑﻞ نہیں ﺑﯿﻮﯼ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﯿﺮﻭﺗﻔﺮﯾﺢ ﺗﮏ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ نہیں ﺟﺬﺑﺎﺕ ﻭﺍﺣﺴﺎﺳﺎﺕ ﺳﮯ ﺗﻮ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻧﺎﻭﺍﻗﻒ ہے ﻣﻮﻟﻮﯼ ﺗﻮ ﺳﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ ﭘﺘﮭﺮ ﺑﻠﮑﮧ ﭼﭩﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﺎ ہے ﺍﺭﮮ ﻣﻮﻟﻮﯼ ﮐﻮﺋﯽ ﻓﺮﺷﺘﮧ نہیں ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﯽ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻓﺮﺩ ہے ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻣﻌﯿﺎﺭﺍﻭﺭﺗﺮﺍﺯﻭﻣﻮﻟﻮﯼ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﻟﮓ ﮐﯿﻮﮞ ﺍﭘﻨﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﻟﮓ ﮐﯿﻮﮞ؟؟ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺍﺧﺮﺍﺟﺎﺕ ﭘﭽﺎﺱ ہزﺍﺭﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﭘﻮﺭﮮ نہیں ہوﺭہی ﻣﻮﻟﻮﯼ ﮐﮯ پانچ ہزار میں ﮐﯿﺴﮯ ﭘﻮﺭﮮ ہوﺭہے ہیں ؟؟

متعلقہ خبریں