نادرا سے ایک عوامی درخواست

2022 ,فروری 7



نادرا آفس والوں سے گزارش ہے! کہ نادرا آفس کے باہر ایک معلوماتی ڈیسک قائم کیا جائے۔ جو آنے والے بزرگ اور ان پڑھ شہریوں کی رہنمائی کریں۔ ان کے کاغذات کو دیکھ کر ان کو بتادیں کہ ان کے پاس کون کون سے ڈاکومنٹس ہونے ضروری ہیں۔ گھنٹوں انتظار کے بعد جب کاؤنٹر پر نمبر آتا ہے تو یہ کہہ کر واپس بھیج دیا جاتا ہے کہ فلاں چیز کم ہے یا کہا جاتا ہے کہ والدین کو ساتھ لانا ہوگا۔ کھبی اندر بیٹھے افسران نے سوچا کہ بندہ کتنا کرایہ لگا کر آیا ہے یا اپنی دیہاڑی چھوڑ کر آیا ہے۔ لہذا متعلقہ حکام سے گزارش ہے! کہ ہر آفس کے باہر ایک معلوماتی ڈیسک قائم کیا جائے جو عوام کو مدد و آگاہی فراہم کرے۔ حکومت پاکستان سے گزارش ہے کہ یونین کونسلوں کو نادرا دفاتر سے منسلک کیا جائے تاکہ جو بھی یونین کونسل سے پیدائش سرٹیفکیٹ، ڈیتھ سرٹیفکیٹ، نکاح نامہ یا دیگر کا اندراج کروائے تو ریکارڈ نادرا پاس بھی موجود ہو۔ شناختی کارڈ، ب فارم اور دیگر ڈاکومنٹس کے حصول کو آسان بنانے کے لیے مزید بہتری کی جائے تاکہ عوام کم وقت میں اپنے شناختی ڈاکومنٹس حاصل کرسکیں۔ نوٹ:: یہ درخواست مفاد عامہ کے لیے ہے تاکہ شہریوں کو کم وقت میں بہتر سہولت پہنچا کر ان کے وقت کو ضائع ہونے سے بچایا جاسکے۔ *اس کو زیادہ سے زیادہ شئیر کریں تاکہ متعلقہ حکام اس حوالے سے بہتر اقدام کرنے پر مجبور ہوں۔

متعلقہ خبریں