عمران خان کا انتخاب ٹھیک ثابت ہوا ۔۔۔۔۔ نئے وزیرخزانہ کے آتے ہی حکومت نے اخراجات پورے کرنے کا آسان طریقہ ڈھونڈ لیا

2019 ,اپریل 19



اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) حکومت نے ایک بڑی کامیابی حاصل کر لی ہے ، حکومت نے نئے نوٹ چھاپنے والے پرینٹنگ پریس کو تیز کر دیا، دو ہفتوں میں 136 ارب روپے کے نئے نوٹوں کا اجرا، زیر گردش نوٹ ملکی تاریخ میں پہلی بار 50 کھرب 80 ارب روپے سے بھی تجاوز کر گئے۔ اسٹیٹ بینک کے مطابق اپریل کے پہلے دو ہفتوں کے دوران حکومت کی طرف سے اوسطا یومیہ 2 ارب 72 کروڑ روپے مالیت کے نئے نوٹوں کا اجرا کیا گیا، 14 روز میں مجموعی طور پر 136 ارب 17 کروڑ 55 لاکھ روپے کے نئے نوٹ جاری ہونے سے ملک میں زیر گردش نوٹوں کا حجم 136 ارب 18 کروڑ 23 لاکھ روپے کے اضافے سے ملکی تاریخ میں پہلی بار 50 کھرب 80 ارب 47 کروڑ 34 لاکھ روپے کی نئی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا.اقتصادی ماہرین کے مطابق آمدنی کم اور اخراجات زیادہ ہونے کے باعث حکومت قرض لے کر یا نئے نوٹ چھاپ کر اخراجات پورے کر رہی ہےاور نئے نوٹ چھاپنا بھی مہنگائی کی ایک بڑی وجہ ہے۔ رواں مالی سال کے دوران وفاقی حکومت اب تک مرکزی بینک سے 34 کھرب 41 ارب روپے قرض لے چکی ہے، دوسری طرف مالی سال کے پہلے نو ماہ کے دوران ایف بی آر کی ٹیکس وصولیاں بھی ہدف سے 318 ارب روپے کم رہی۔ دوسری جانب یہ بھی خبر یہ ہے کہ نئے نامزد ہونے والے مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ نے کہا ہے کہ معاشی فیصلے جذباتیت سے نہیں بلکہ سوچ سمجھ کر کرنا ہونگے، سوچ اور سمجھ کا استعمال کرنا ہوگا، جذباتی ہو کر جو فیصلے کیئ وہ میعشت کو برباد کر دیں گے ، جذباتی ہو کر فیصلے نہین ہو سکتے۔نامزد مشیر خزانہ عبدالحفیظ شیخ دبئی سے پاکستان پہنچ گئے ہیں، انہوں نے معاشی فیصلوں کے لیے اپنا روڈ میپ تیار کر لیا ہے۔عبدالحفیظ شیخ کی وزیراعظم عمران خان سے جلد ملاقات متوقع ہے

متعلقہ خبریں