تمام دردیں اور بیماریاں ڈرامہ نکلیں ۔۔۔۔ جیل سے رہا ہوتے ہی نواز شریف کے حوالے سے نا قابل یقین انکشاف سامنے آگیا

2019 ,اپریل 11



لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) سابق وزیراعظم میاں محمد نواز شریف کی مدت ضمانت ختم ہونے میں چار ہفتے باقی ہیں تاہم ان کا ابھی تک علاج شروع نہیں ہو سکا ہے۔ لندن میں معالجین سے رابطے کا فیصلہ کر لیا گیا ہے، جبکہ فواد چودھری کا کہنا ہے کہ رہائی ملتے ہی نواز شریف کی ساری دردیں ختم ہو گئی ہیں ، یہ سب کچھ ڈرامہ تھا ، اس میں کچھ حقیقت نہیں ہے۔ خاندانی ذرائع کے مطابق میڈیکل بورڈ نے میاں نواز شریف کے دماغ کی شریانوں میں رکاوٹ دور کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ اس سلسلے میں لندن میں ان کے معالجین سے بھی فوری رابطہ کر لیا گیا ہے تاہم سابق وزیراعظم کا علاج شروع نہیں ہو سکا ہے اور ضمانت کی مدت ختم ہونے میں چار ہفتے باقی رہ گئے ہیں۔گزشتہ روز سابق وزیراعظم کے ذاتی معالج نے میڈیا سے گفتگو میں کہا تھا کہ نواز شریف کا علاج کیا اور کہاں ہونا ہے؟ اس بارے میں علاج کا روڈ میپ ابھی طے نہیں کیا اور نہ ہی یہ بتا سکتے ہیں کہ علاج کب تک چلے گا۔ڈاکٹر عدنان کا کہنا تھا کہ علاج پاکستان میں ہوگا یا باہر ہوگا؟ یہ ابھی فیصلہ نہیں کر پائے۔ نواز شریف گزشتہ روز شریف میڈیکل سٹی ہسپتال پہنچے جہاں تقریباً ایک گھنٹہ تک ان کا طبی معائنہ کیا گیا۔اس کے بعد نواز شریف واپس جاتی امرا لوٹ آئے۔ اس موقع پر نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ نواز شریف کے دل کی دھڑکن متوازن رکھنے کیلئے مستقل پیس میکر لگانا پڑے گا جبکہ ان کو دل میں انٹروینشن کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ میڈیکل بورڈ نے پرانے تمام ٹیسٹ، رپورٹ، میڈیکل ریکارڈ اور سفارشات کا جائزہ لیا ہے۔ بورڈ نے نواز شریف کا بھی معائنہ کیا۔ ان کی گردن اور دماغ کو خون کی فراہمی مکمل نہیں مل رہی ہے

متعلقہ خبریں