وہ لیجنڈ پاکستانی اداکار جسے وفات کے 27 سال بعد ستارہ امتیاز دیاگیا۔۔۔ مگر کیوں ؟ جانیے

2018 ,نومبر 22



لندن (مانیٹرنگ ڈیسک ) دنیا سے رخصت ہو جانے کے بعد ہمیشہ لوگوں کے دلوں میں زندہ رہنے والی ایسی بہت کم شخصیات پیدا ہوئی ہیں ۔ وہ پاکستانی فلمی صنعت کے ایک ایسے عظیم سپر اسٹار ہیرو تھے،جنہیں پرستاروں نے محبوب کا درجہ دیا ہواتھا۔ ان کے مداح آج بھی ان کی یادوں کو اپنے دلوں میں بسائے ہوئے ہیں۔ وحید مراد نے سلور اسکرین کے پردے کے پیچھے سے لوگوں کو مخاطب کیا اور انہیں انسان دوستی، عزت و احترام اور انسانی عظمت کی تعلیمات کا درس دیا۔جبکہ ایک تخلیق کار ذہن ہونے کے ساتھ روایات سے ہٹ کر پاکستانی معاشرے کی بھر پور عکاسی کرتے ہوئے بہت اچھی، معیاری فلمیں بنائیں اور لاکھوں دلوں میں بس گئے۔۔وحید مرادنئی نسل کے پسندیدہ ہیرو مانے جاتے تھے۔وحید مراد سیالکوٹ میں 2 اکتوبر 1938ء میں پیدا ہوئے ۔ وہ پاکستانی فلموں کے مشہور ڈسٹری بیوٹر نثار مراد کی اکلوتی اولاد تھے وحید کی والدہ کا نام شیریں مراد تھا ۔ بچپن میں اپنے والد کے پاس آنے والے نامور اداکاراؤں کو دیکھ کران سے بہت کچھ سیکھا۔ جن کے ساتھ اداکاری کرنے کے لئے انہیں حوصلہ ملا۔ بچپن میں گلے میں گٹار لٹکانے اور اپنے دوستوں میں ایک اچھا ڈانسر ہونے پر مشہور تھے۔ سکول کے کئی ڈراموں میں حصہ لے کر اپنی اداکاری کے جوہر دکھائے جس سے بچپن میں بہت شہرت ملی ،وحید مرادنے میری سکول کراچی سے 1954ء میں میٹرک پاس کیا۔ فلمی کیرئیر میں آنے کے لئے بے چین وحید مراد کو والدین نے پہلے اسے اپنی تعلیم مکمل کرنے کے لئے کہا۔ وحید نے ایس ایم آرٹس کالج کراچی میں میں گریجویشن کیا اور پھر کراچی یونیورسٹی سے انگریزی ادب میں ماسٹرز مکمل کیا۔ وہ پاکستان کے پہلے ماسٹرز کئے ہوئے ہیرو تھے۔

متعلقہ خبریں