یہ تو بھول جاؤ ، ایسی بلیک میلنگ نہیں چلے گی ۔۔۔ آئی ایم ایف سے قرضہ ملنے کی بڑی شرط، عمران خان ڈٹ گئے ، صاف الفاظ میں انکار کر دیا

2019 ,مئی 3



اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک ) حکومت نے آئی ایم ایف کا ڈالر کی قیمت میں اضافہ کرنے کا مطالبہ منظور کرنے سے انکار کردیا، بجلی، گیس کی قیمتیں پہلے ہی بڑھائی جا چکیں، جبکہ ڈالر کی قیمت میں بھی برداشت سے زیادہ اضافہ کیا جا چکا، اس لیے فوری طور پر مزید اضافہ ممکن نہیں۔ دعویٰ کیا گیا ہے کہ حکومت نے آئی ایم ایف کا ڈالر کی قیمت میں اضافہ کرنے کا مطالبہ منظور کرنے سے انکار کردیا ہے۔آئی ایم ایف کی جانب سے بجلی، گیس اور ڈالر کی قیمت میں اضافہ کرنے کیلئے حکومت پر دباو ڈالا جا رہا ہے۔ تاہم حکومت آئی ایم ایف کی یہ شرط قبول کرنے کیلئے راضی نہیں ہے۔ ذرائع کے مطابق حکومت نے موقف اختیار کیا ہے کہ بجلی، گیس کی قیمتیں پہلے ہی بڑھائی جا چکیں، جبکہ ڈالر کی قیمت میں بھی برداشت سے زیادہ اضافہ کیا جا چکا، اس لیے فوری طور پر مزید اضافہ ممکن نہیں ہے۔دوسری جانب بتایا گیا ہے کہ پاکستان اور آئی ایم ایف مذاکرات کی کامیابی کو ٹیکس، توانائی، گیس اور پٹرولیم کے لئے نئی پالیسیوں سے مشروط کردیا گیا ہے۔اس حوالے سے یہ بھی شرط رکھی گئی ہے کہ بجٹ کا خسارہ جی ڈی پی کا 5 فیصد سے زیادہ نہیں ہونا چاہیے ۔پیکج پاک آئی ایم ایف پالیسی فریم ورک پیپر کے عنوان سے ترتیب دیا جائے گا۔پہلا حصہ چار ارب ڈالر کا ہوگا جو ڈرافٹ کی منظوری پر منتقل کر دیے جائیں گے۔دوسرا حصہ مساوی رقم کا ہوگا جس میں سے ہر تین ماہ بعد 3۔36 کروڑ ڈالر کی ادائیگی ہوگی۔ہر ادائیگی سے پہلے شرائط کی تعلیمی رپورٹ پیش کرنا لازم ہو گا۔ہر ادائیگی سے پہلے آئی ایم ایف کام کی تصدیق کریں گے۔خیال رہے پاکستان اور عالمی مالیاتی ادارے (آئی ایم ایف)کے درمیان مذاکرات سات مئی تک جاری رہیں گے ۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق پہلے مرحلے میں محصولات، ایکسچینج ریٹ، انٹرسٹ ریٹ ، بجلی اورگیس کی قیمتوں پر بات چیت ہورہی ہے ،آئی ایم ایف نئے مالی سال سے بھرپور ٹیکس اصلاحات چاہتا ہے۔نجی ٹی وی کے مطابق آئی ایم ایف کے تحفظات کی وجہ سے ایمنسٹی اسکیم کے نافذ ہونے میں مزید تاخیر کا امکان ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف ایمنسٹی اسکیم کے تحت دی جانے والی ٹیکس چھوٹ کے خلاف ہے۔ جب کہ دوسری جانب حکومت نے 24 مئی کو بجٹ پیش کرنے کا اعلان کردیا، وزیر مملکت برائے خزانہ حماد اظہر نے اعلان کیا ہے کہ وفاقی حکومت رواں ماہ کی 24 تاریخ کو بجٹ پیش کر دے گی۔وفاقی وزیر کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کے ساتھ اکتوبر سے مذاکرات چل رہے ہیں۔ آئی ایم ایف کی ٹیم پاکستان آئی ہے ۔ ن لیگ کے دور میں ڈالر دس فیصد بڑھا جبیکہ پی پی دور میں ڈالر کی قیمت میں پچیس اضافہ ہوا۔ مہنگائی کی شرح نو فیصد سے کم ہو کر آٹھ فیصد تک آئی ہے ،پی پی کے پہلے آٹھ ماہ میں مہنگائی کی شرح 24 فیصد تھی ۔ وزیرمملکت ریونیو نے تیل کی قیمتیں مزید بڑھانے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ دنیا میں تیل کی قیمتوں میں 35 فیصد اضافہ ہو گیا۔ ہمیں بھی تیل کی قیمتوں میں اضافہ کرنا پڑے گا ۔تاہم تیل کی قیمتیں آہستہ آہستہ بڑھائیں گے ۔

متعلقہ خبریں