کیا یہ بھی ہوسکتا تھا؟ رہا ہوتے ہی نواز شریف کے ساتھ اچانک ایسا کام ہوگیا کہ پورا ملک ہکا بکا رہ گیا

2019 ,مارچ 27



لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) سابق وزیراعظم نواز شریف کو سرکاری پروٹوکول دے دیا گیا ۔ تفصیلات کے مطابق نواز شریف کو سابق وزیراعظم کا پروٹوکول دیا گیا ہے۔ کُل 15 اہلکار نواز شریف کی سکیورٹی کے لیے تعینات کیے گئے ہیں جو تین شفٹوں میں اپنی ڈیوٹی انجام دیں گے، ایک گاڑی اور پانچ پولیس اہلکار 24 گھنٹے نواز شریف کے ساتھ ہوں گے۔ نواز شریف کی سکیورٹی کے لیے جاتی امرا کے اطراف میں بھی کم و بیش 30 پولیس اہلکاروں کو تعینات کر دیا گیا ہے تاکہ نواز شریف کی سکیورٹی کو فول پروف بنایا جا سکے۔ واضح رہے کہ سابق وزیراعظم نواز شریف گذشتہ شب لاہور میں موجود اپنی رہائش گاہ جاتی امرا پہنچے تو مسلم لیگ کے کارکنان نے ان پر گُل پاشی کی جس کی وجہ سے جاتی امرا کا داخلی دروازہ پھولوں سے بھر گیا۔ جاتی امرا آمد پر نواز شریف کے لیے بکروں کا صدقہ بھی دیا گیا۔ اس موقع پر جاتی امرا کے باہر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔ نواز شریف نے جاتی امرا کے داخلہ راستے پر موجود کارکنان کے نعروں کا ہاتھ ہلا کر جواب دیا، کئی لیگی کارکنان نے پارٹی قائد کی رہائی پر ڈھول کی تھاپ پر بھنگڑے بھی ڈالے اور قائد کی گھر واپسی پر خوشی کا اظہار کیا جبکہ مٹھائیاں بھی تقسیم کی۔ یاد رہے کہ منگل کے روز سپریم کورٹ میں سابق وزیراعظم نواز شریف کی طبی بنیادوں پرضمانت کی درخواست پر سماعت ہوئی۔ سپریم کورٹ میں چیف جسٹس آصف کھوسہ کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے نواز شریف کی درخواست ضمانت کی ساعت کی۔ نواز شریف کو طبی بنیادوں پر درخواست کی سماعت مکمل ہونے پر عدالت نے ضمانت کا فیصلہ محفوظ کیا تھا جو کہ منگل کو سنا دیا گیا ۔ چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے مختصر فیصلہ پڑھ کر سنایا۔عدالت نے نواز شریف کی طبی بنیادوں پر ضمانت کی درخواست منظور کی اور نواز شریف کی 6 ہفتے کی ضمانت منظور کرتے ہوئے 6 ہفتوں کے لیے سزا معطل کر دی۔ نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث کی جانب سے 8 ہفتوں کے لیے ضمانت کی استدعا کی گئی تھی تاہم عدالت نے 6 ہفتوں کے لیے ضمانت کی درخواست منظور کرتے ہوئے نواز شریف کو 50,50لاکھ کے د و مچلکے جمع کروانے کا حکم دیا۔ عدالت نے یہ بھی حکم دیا کہ نواز شریف کو بیرون ملک جانے کی اجازت نہیں ہو گی۔ نواز شریف پاکستان میں اپنی پسند کے ڈاکٹر سے علاج کروا سکیں گے۔ 6 ہفتوں بعد نواز شریف کو دوبارہ جیل جانا ہو گا۔

متعلقہ خبریں