لبنان میں باحجاب خاتون کو ساحل سمندر پر جانے سے روک دیا گیا

2018 ,جولائی 31



لبنان(مانیٹرنگ ڈیسک): لبنان میں حجاب والی خاتون کو ساحل سمندر پر جانے سے روک دیا گیا۔دنیا کے مختلف ممالک میں خواتین کو حجاب کی وجہ سے مختلف مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے، مغربی اور یورپ کے بیشتر ممالک میں حجاب والی خواتین کو نفرت کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے اور اکثر انہیں نوکریوں سے بھی محروم رہنا پڑتا ہے جب کہ اب تک مسلم خواتین کے سر سے حجاب اتارنے کے متعدد واقعات رپورٹ ہوچکے ہیں۔لبنان میں بھی ایک فیملی کو اسی طرح کی صورتحال کا سامنا اس وقت کرنا پڑا جب وہ تفریح کی غرض سے ساحل سمندر پر گئی لیکن ان کے ہمراہ ایک باحجاب خاتون بھی موجود تھیں جنہیں ساحل پر جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔ ریوانے ایلے ڈائن نامی لڑکی نے کہا کہ ہم 5 مختلف ساحل سمندر پر گئے لیکن کسی ایک پر بھی میری ماں کو حجاب کی وجہ سے جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔

خاتون نے سوشل میڈیا پر بھی ایک پوسٹ کی جس میں کہا کہ میں اپنی فیملی کے ہمراہ لبنان کے ایک ضلع میں موجود ہیں جہاں ہم نے 5 ساحل سمندر کا دورہ کیا مگر میری والدہ کو حجاب کی وجہ سے ساحل سمندر پر جانے کی اجازت نہیں دی گئی حالانکہ ہم نے یہ یقین دہانی بھی کروائی کہ وہ تیراکی نہیں کریں گی صرف بیٹھی رہیں گی تاہم ابتدائی 4 پر تو اجازت نہیں ملی لیکن پانچویں ساحل سمندر پر انہیں صرف ساحل سے دور بیٹھنے کی اجازت دی گئی۔ریوانے ایلے ڈائن نے مزید کہا کہ مجھے اس پر بہت حیرت ہوئی کہ لبنان جیسا ملک بھی اسلام فوبیا کا شکار ہے اور یہ ہمارے ساتھ پہلی بار ہوا ہے جب کہ کسی بھی جگہ انتظامیہ ہمیں وجہ بتانے سے قاصر رہی بس وہ اسے ساحل سمندر کا اصول قرار دیتے رہے۔

متعلقہ خبریں