بڑے کام کی خبر : عمران حکومت نے سعودی ولی عہد کے دورہ پاکستان سے دو روز قبل ہی عازمین حج کو شاندار خوشخبری سنا دی

2019 ,فروری 14



اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک): ذرائع کے مطابق حج سبسڈی ختم کرنے پر موجودہ حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا جس کے بعد پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے حج اسکیم برائے سال 2019ء متعارف کروادی ہے۔ اس اسکیم کے تحت سعودی حکام نے پاکستان کو 5 ہزار حجاج کا اضافی کوٹہ تفویض کیا ہے۔اس کے ساتھ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ کسی کو بھی مفت حج کرنے کی سہولت نہیں دی جائے گی۔تفصیلات کے مطابق حجاج کرام کو بہترین سہولیات فراہم کرنے کی غرض سے روڈ ٹو مکہ نامی پائلٹ پراجیکٹ کا آغاز بھی کیا گیا ہے اور سعودی عرب میں داخلے کے بعد حاجیوں کو پیش آنے والی مشکلات کے خاتمے کے لیے حکومت نے سعودی حکام سے کراچی کے جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر امیگریشن کاؤنٹر بنانے کی درخواست بھی کی ہے۔اس کے علاوہ حکومت حج 2019ء کے لیے ای ویزا سروس متعارف کروانے کے لیے بھی سعودی حکومت سے بات چیت کررہی ہے۔رواں برس پہلی مرتبہ حج پروازوں میں 10 ہزار نشستیں 80 سال کی عمر سے زائد کے حجاج کرام کے لیے مختص کی گئی ہیں جس میں 80 سال کے ایک مرد حاجی اور ان کے معاون جبکہ 80 سال عمر کی خاتون کے ساتھ ان کی خاتون معاون اور ایک مشترکہ محرم شامل ہوں گے۔ اگر اس قسم کے درخواست گزاروں کی تعداد 10 ہزار سے زائد ہوئی تو عمر کے اعتبار سے برتری کو فوقیت دی جائے گی۔ دوسری جانب میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کے دورہ پاکستا کے دوران جہاں مختلف شعبوں میں تعاون کے معاہدے ہوں گے وہاں پر وزارت مذہبی امور کے حکام کی طرف سے پاکستان کے حج کوٹہ میں مزید اضافے کی در خواست کی جا ئے گی۔رواں برس پانچ ہزار کا اضافی کوٹہ وزارت مذہبی امور کو دیا گیا ہے تاہم سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کے دورہ پاکستان کے دوران ان سے مزید 10 ہزار حاجیوں کے لئے کوٹے کی اپیل کی جائے گی۔پاکستانی عازمین حج کو سعودی عرب میں سفری اور رہائشی سہولیات کے حوالے سے بھی سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کے ساتھ تبادلہ خیال کیا جائے گا جبکہ عمرہ ادائیگی کے لئے سعودی حکومت کی طرف سے عائد کیے گئے گئے دو ہزار ریال کے ٹیکس کی معافی کے بارے میں بھی سعودی ولی عہد سے خصوصی درخواست کی جائے گی۔

متعلقہ خبریں