نواز شریف کی حالت تشویشناک ، تحریک انصاف کی بڑی شخصیت اچانک جیل پہنچ گئی ، ڈاکٹروں کا جواب آگیا

2019 ,مارچ 10



لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) وزیر اعلیٰ پنجاب کے ترجمان ڈاکٹر شہباز گل نے 2 ڈاکٹرز کے ہمراہ سابق وزیراعظم نواز شریف سے کوٹ لکھپت جیل میں ملاقات کی ہے۔ ترجمان وزیر اعلیٰ پنجاب ڈاکٹر شہباز گل نے کوٹ لکھپت جیل کا دورہ کیا اور سابق وزیر اعظم نواز شریف سے ملاقات کی۔ ان کے ہمراہ پنجاب انسٹی ٹیوٹ آف کارڈیالوجی کے 2 پروفیسر ڈاکٹرز بھی نواز شریف سے ملے۔ پروفیسر ندیم ملک اور پروفیسر ثاقب شفیع نے سابق وزیر اعظم نواز شریف کا میڈیکل چیک اپ کیا اور ادویات میں تبدیلی کی تجویز دی۔ ڈاکٹرز نے نواز شریف کو ایکسرسائز سائیکل فراہم کرنے کی بھی تجویز دی جس پر وزیر اعلیٰ نے فیصلہ کیا ہے کہ انہیں ایکسر سائز سائیکل فراہم کی جائے گی۔ کوٹ لکھپت جیل میں مریم نواز کے مطالبے پر ایک ہیلتھ یونٹ بھی قائم کردیا گیا ہے جس میں تین کارڈیالوجسٹ 3 شفٹوں میں ڈیوٹی سرانجام دے رہے ہیں۔ جبکہ دوسری جانب پیپلزپارٹی کے سینئر رہنما خورشید شاہ نے کہا ہے کہ اگر حکومتی نالائقی سے سابق وزیراعظم نوازشریف کو کچھ ہوا تو اسے قتل سمجھا جائے گا۔ سکھر میں شجر کاری مہم کی افتتاحی تقریب کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ عمران خان اور اس کی پارٹی میری ایک بات یاد رکھیں اگر نالائقی کی وجہ سے نوازشریف کو نقصان ہوا تو اس کو قتل سمجھا جائےگا، اس میں عمران خان اور اس کے ساتھی ملوث سمجھیں جائیں گے اور وہ اس سے بچ نہیں سکیں گے۔ انہوں نے کہا کہ نوازشریف کا گزشتہ روز والا بیان فکر کی بات ہے، سروسز اور جناح ہسپتال میں ہارٹ کا شعبہ ہی نہیں ہے۔ خورشید شاہ نے کہا کہ نوازشریف کو پنجاب کارڈیالوجی یا این آئی سی وی ڈی میں علاج کی اجازت نہیں دی جارہی، نوازشریف کو جیل سے نکال ہی نہیں رہے۔ نواز بلاول ملاقات کے پر تبصرہ کرتے ہوئے خورشید شاہ نے کہا کہ بلاول بھٹو سیاست دان ہیں، مسلم لیگ(ن) اور پاکستان پیپلزپارٹی شروع سے ہی بڑی سیاسی پارٹیاں ہیں۔خورشید شاہ کا کہنا تھا کہ وزیراعظم پورے ملک کا ہوتا ہے لیکن عمران خان آج بھی کنٹینر پر کھڑے ہیں۔ عمران خان کی سیاست گالم گلوچ کی سیاست ہے، اسے کنٹینر پر چڑھایا گیا تھا لیکن وہ تاحال اترنے کو تیار نہیں ہے۔

متعلقہ خبریں