دل چیر دینے والی خبر : یمن کے حوثی باغیوں کے ظلم وستم کی ایسی کہانی سامنے آ گئی کہ آپ کی آنکھیں نم ہو جائیں گی

2019 ,اپریل 8



صنعاء(مانیٹرنگ ڈیسک): یمن کی آئینی حکومت کے وزیر اطلاعات معمر الاریانی نے کہا ہے کہ حوثی ملیشیا نے ملک میں شہریوں کی غربت اور بے روزگاری سے ناجائز فایدہ اٹھاتے ہوئے ان کے 50 ہزار بچوں کو جنگ کا ایندھن بنایا۔ بچوں کو جنگ میں جھونکنے کا سلسلہ 2014ء سے جاری ہے۔ اور یمن کے مستقبل میں یہ ایک حقیقی انسانی المیہ بن سکتا ہے۔عر ب ٹی وی کے مطابق یمنی وزیراطلاعات نے ان خیالات کا اظہار جرمن خارجہ تعلقات کونسل کے وائس چیئرمین فولکر سٹانزر سے ملاقات کے دوران کیا۔معمر الاریانی نے کہا کہ حوثی باغیوں کی جانب سے بچوں کو جنگ کا ایندھن بنانے کا سلسلہ انتہائی خطرناک اور بین الاقوامی قوانین کی سنگین خلاف ورزی ہے،انہوں نے خبردار کیاکہ ایران یمن کی باب المندب پر قبضہ کرنے کی کوشش کررہا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ ایران کو باب المندب پر قبضہ کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ یہ ایک اہم عالی آبی گزرگاہ ہے جہاں سے 12فی صد عالمی بحری تجارتی ٹریفک کی آمد ورفت ہوتی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ایران کی طرف سے جنگ زدہ یمنی عوام کو امدادی سامان کا ایک ٹرک بھی نہیں دیا گیا۔دوسری جانب خبر یہ ہے کہ بر اعظم افریقہ کے ملک روانڈا میں پچیس سال قبل ہونےوالے قتل عام میں مرنےوالوں کی یاد میں تعزیتی مارچ ہوا، 1994 میں 100 دنوں میں آٹھ لاکھ لوگوں کو قتل کیا گیا تھا۔مارچ کے موقع پرہزاروں افراد سڑکوں پرنکل آئے اور شمعیں جلا کرمرنے والوں کوخراج عقیدت پیش کیا ۔ روانڈا میں ہونےوالےفسادات اس وقت شروع ہوئے تھے جب انیس سوچورانوے میں اس وقت کےصدر کے جہازکومارگرایا گیا تھا ۔فسادات میں تین ماہ کے اندر مقامی اقلیت ٹوسٹی باشندوں سمیت آٹھ لاکھ افراد مارے گئے تھے۔

 

متعلقہ خبریں