چیک پوسٹ حملے کے وقت محسن داوڑ ۔۔۔۔ ساتھی کے انکشاف نے پورے ملک میں ہلچل مچا دی

2019 ,مئی 29



اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) پختون تحفظ موومنٹ (پی ٹی ایم) کے رہنما محسن داوڑ کے ساتھی نے اعترافی بیان میں کہا ہے کہ خارقمر چیک پوسٹ پر حملے کے وقت مسلح شخص محسن داوڑ تھا۔ ڈاکٹر عالم نے اپنے ویڈیو بیان میں بتایا کہ محسن داوڑ مسلح گارڈ کے ساتھ تھا جبکہ چیک پوسٹ پر حملہ کرنے والا گروہ بھی محسن داوڑ اور علی وزیر کی کمان میں کام کررہا تھا، چھپے ہونے کے دوران بنائی گئی ویڈیو میں محسن داوڑ نے 2 بیرئیر زبردستی پار کرنے کا فخریہ اعتراف بھی کیا،علی وزیر کی بھی فوج پر حملے کیلئے اکسانے کی ویڈیو سامنے آچکی ہے ۔ دوسری جانب پختونوں کے تحفظ کیلئے قائم کی گئی نام نہاد جماعت پی ٹی ایم کے رہنماؤں علی وزیر اور محسن داوڑ کا افغان خفیہ ادارے نیشنل ڈائریکٹوریٹ آف سیکیورٹی (این ڈی ایس) کیساتھ تعلق کا انکشاف ہوا ہے۔ افغان خفیہ ادارے نیشنل ڈائریکٹوریٹ آف سیکیورٹی (این ڈی ایس) کے سابق سربراہ نے محسن داوڑ اور علی وزیر کی حمایت کرتے ہوئے امریکا سے مدد بھی مانگ لی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ امریکا علی وزیر، محسن داوڑ اور ان کے ساتھیوں کا ساتھ دے۔ معتبر ذرائع کے مطابق این ڈی ایس کے سابق سربراہ رحمت اللہ نبیل، محسن داوڑ اور علی وزیر وزیر ستان کو امریکی خواہش کے مطابق علاقہ بنانا چاہتے ہیں۔ خیال رہے کہ رحمت اللہ نبیل 2010ء سے 2012ء تک افغان خفیہ ادارہ این ڈی ایس کا سربراہ رہا تھا۔ دوسری جانب محسن داوڑ کی پاک فوج کے خلاف ہرزہ سرائی مسلسل جاری ہے اور اس نے وزیرستان میں لوگوں کو فوج کے خلاف اکسانے کی مہم جاری رکھی ہوئی ہے۔ پی ٹی ایم محسن داوڑ نے شر انگیزی کرتے ہوئے کہا ہے کہ کوئی جوان وزیرستان سے زندہ واپس نہیں جائے گا، پاکستان آرمی وزیر ستان سے چلی جائے۔ ادھر امریکی خبر رساں ادارہ وائس آف امریکا ایک ایجنڈے کے تحت پاکستان مخالف خبریں چلا رہا ہے اور محسن داوڑ اسے مسلسل انٹرویو دے رہا ہے۔

متعلقہ خبریں