اداکارہ سری دیوی کی موت قتل تھا خود کشی یا اتفاقی حادثہ : دبئی پولیس کی تازہ ترین رپورٹ نے معاملے کا ڈراپ سین کر دیا

2018 ,فروری 27



لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) دبئی پولیس نے انڈین اداکارہ سری دیوی کی موت کے حوالے سے کیس بند کرتے ہوئے ان کی میت کو ان کے لواحقین کے حوالے کر دیا ہے۔ 54 سالہ سری دیوی کی ہلاکت کے بارے میں دبئی پولیس کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ وہ اپنے ہوٹل کے غسل خانے میں بےہوش ہونے کے بعد باتھ ٹب میں موجود پانی میں ڈوب کر ہلاک ہوئیں۔ اس سے قبل بتایا گیا تھا کہ سری دیوی سنیچر کی شب دبئی میں ایک شادی کے دوران دل کا دورہ پڑنے سے چل بسی تھیں۔ ان کی لاش کو اب انڈیا لے جانے کے لیے تیار کیا جا رہا ہے۔ ممبئی میں سری دیوی کی رہائش گاہ کے باہر مداحوں کی بڑی تعداد ان کی آخری رسومات سے قبل انھیں خراجِ عقیدت پیش کرنے کے لیے جمع ہوگئی ہے۔پاکستانی اداکا عدنان صدیقی کے بقول سری دیوی کا فن کے لیے جذبہ اور لگن کمال کی تھی۔ سری دیوی 13 اگست سنہ 1963 کو تمل ناڈو میں پیدا ہوئی تھیں اور سنہ 1978 میں انھوں نے اپنے فلمی کریئر کا آغاز فلم ‘سولہواں ساون’ سے کیا تھا۔ حال ہی میں ریلیز ہونے والی ‘مام’ ان کی 300 ویں فلم تھی۔ ان کی مشہور ترین فلموں میں ‘چاندنی’، ‘لمحے’، ‘مسٹر انڈیا’، ‘خدا گواہ’ ‘صدمہ’ اور ‘نگینہ’ شامل ہیں۔ انھوں نے ہندی فلموں کے علاوہ جنوبی ہند میں تمل، تیلیگو، ملیالم، اور کنڑ زبانوں کی فلموں میں بھی کام کیا۔ سری دیوی نے فلم پروڈیوسر بونی کپور سے سنہ 1996 میں شادی کی تھی اور ان کی دو بیٹیاں خوشی اور جھانوی کپور ہیں۔ سری دیوی کو 2013 میں حکومت کی جانب سے پدما شری اعزاز سے بھی نوازا گیا تھا۔ اس کے علاوہ وہ پانچ بار فلم فیئر ایوارڈ بھی حاصل کر چکی ہیں۔ انھوں نے جب 90 کی دہائی میں اپنے فلمی کریئر کو الودع کہا تھا تو اس وقت ان کی فلمیں اچھی طرح سے نہیں چل رہی تھیں۔ لیکن اس طویل وقفے کے بعد جب وہ واپس آئیں تو اپنی اداکاری سے ایک بار پھر ہنگامہ مچا دیا تھا۔

متعلقہ خبریں