فلم پد ماوت مودی حکومت کا تختہ الٹنے کو تیار ،قتل کی دھمکیاں ملنے کے بعد بھارتی حکومت کے لیے بری خبر آ گئی

2018 ,جنوری 21



کلکتہ (مانیٹرنگ ڈیسک): بولی وڈ فلم ’پدماوت‘ کو اگرچہ بھارت کی سپریم کورٹ اور فلم سینسر بورڈ نمائش کی اجازت دے چکا ہے، تاہم پھر بھی فلم کی مشکلات کم نہ ہوئیں۔فلم کی ٹیم نے راجپوت کرنی سینا نامی ہندو انتہاپسند تنظیم کے خدشات کو دور کرنے کے لیے اگرچہ فلم کے مناظر میں تبدیلیاں بھی کی ہیں، تاہم پھر بھی کرنی سینا کے کارکنان احتجاج جاری رکھے ہوئے ہیں۔

راجپوت کرنی سینا کے احتجاج کو مد نظر رکھتے ہوئے ڈائریکٹر سنجے لیلیٰ بھنسالی نے گزشتہ روز پارٹی کے سربراہ کو خط لکھ کر انہیں فلم دیکھنے کی دعوت بھی  سنجے لیلیٰ بھنسالی نے راجپورت کرنی سینا کمیونٹی کے سربراہ لوکندرہ سنگھ کلوی کو خط لکھ کر دعوت دی کہ وہ ان کے لیے ’پدماوت‘ کی خصوصی اسکریننگ کا اہتمام کریں گے، وہ فلم کی نمائش سے قبل فلم دیکھ لیں۔ تاہم انہوں نے ڈائریکٹر کی اس پیش کش کو مسترد کردیا۔لوکندرہ سنگھ کلوی نے پریس کانفرنس کے دوران سنجے لیلیٰ بھنسالی کی دعوت کو ڈرامہ قرار دیتے ہوئے کہا انہیں یہ دعوت اس وقت دی گئی، جب فلم کی نمائش کی تاریخ کا اعلان کردیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ اس دعوت کا مقصد ہدایت کار کی جانب سے یہ دکھانا ہے کہ انہوں نے کرنی سینا کو فلم دکھانے کی پیش کش بھی کی، تاہم وہ اس دعوت کو مسترد کرتے ہیں۔ ساتھ ہی لوکندرہ سنگھ کلوی نے بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی سے درخواست کی کہ وہ ’پدماوت‘ کی نمائش پر پابندی عائد کردیں۔انہوں نے نریندر مودی سے اپیل کی کہ وہ سائنماٹوگرافی ایکٹ کے سیکشن 6 کے تحت فلم کی نمائش پر پابندی عائد کریں۔

راجپوت کرنی سینا کے سربراہ کا کہنا تھا کہ ’پدماوت‘ کی نمائش نہ روکے جانے پر ان کی تنظیم کی خواتین اجتماعی خودسوزی بھی کریں گی۔انہوں نے بتایا کہ ان کی جماعت کی 1908 رکن خواتین نے خود کو اجتماعی خودسوزی کے لیے رجسٹرڈ کروایا ہے، جو 24 جنوری کو اس صورت میں اجتماعی خودکشی کریں گی، جب فلم پر پابندی عائد نہیں کی گئی۔ دوسری جانب فلم کی ٹیم نے ’پدماوت‘ کے تبدیل شدہ ڈائلاگ پرومو اور ’گھومر‘ گانے کی ویڈیوز بھی جاری کردی ہیں، جنہیں اب تک کروڑوں افراد دیکھ چکے ہیں۔فلم کی ٹیم نے پدماوت کے تین ڈائلاگ پرومو 19 جنوری جب کہ ’گھومر‘ گانے کی ویڈیو اس سے قبل جاری کی تھی۔

متعلقہ خبریں