مسلم لیگ ن اور پیپلز پارٹی نے جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیر پر پابندی کو غیرقانونی قراردیدیا

2019 ,مارچ 1



اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) اپوزیشن کی دونوں بڑی جماعتوں پاکستان مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی نے جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیر پر پابندی کو غیرقانونی قراردیتے ہوئے  کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں ایک طرف مظالم بڑھ رہے ہیں ، دوسری طرف سیاسی سرگرمیوں پر بھی قدغن عائد کی جارہی ہے، بھارت بوکھلاہٹ کا شکار ہے ۔

نجی ٹی وی کے مطابق سینیٹ میں قائد حزب اختلاف اور  پاکستان مسلم لیگ ن کے چیئرمین سینیٹر راجہ ظفر الحق نے کہاکہ مقبوضہ کشمیر میں بھارت کئی سالوں سے مظالم ڈھا رہا ہے، اب سیاسی جماعتوں کے حوالے سے بھی بوکھلاہٹ کا شکار ہے ،جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیر کی موثر جماعت ہے اور بوکھلاہٹ میں بھارت نے اس جماعت پر پابندی لگا دی جس کی میں مذمت کرتا ہوں۔انہوں نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کی آواز کو دبایا نہیں جاسکتا کیونکہ ان کی رائے موثر ہوتی ہے ، ان پر پابندیاں لگانے سے ان کی عوامی تائید میں اضافہ ہوتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ بھارت انتہا پسندی کا مظاہرہ کررہا ہے، ان پابندیوں کی پروا نہ کرتے ہوئے لوگ گھروں سے باہر نکل رہے ہیں ، بھارت سے مقبوضہ کشمیر کے عوام مطمئن نہیں ہیں وہ کب تک لوگوں کی آواز دباتا اور ان پر پابندیاں لگاتا رہے گا؟غیر قانونی پابندیوں سے رائے عامہ کو روکا نہیں جاسکتا۔

پاکستان پیپلزپارٹی کی سینیئر رہنما اور سابق قائدحزب اختلاف سینیٹر شیری رحمان نے کہاکہ مقبوضہ کشمیر میں سیاسی جماعتوں پر پابندی لگانا غیر قانونی ہے، مقبوضہ کشمیر میں ریاستی بربریت جو کئی سالوں سے جاری ہے سیاسی جماعتوں پر پابندی اسی کی کڑی ہے اور وہ اپنے مظالم کو بڑھاتے جارہے ہیں اور جب ان کی پابندیوں پر احتجاج کیا جاتا ہے تو سوال اٹھایا جاتا ہے کہ احتجاج کیوں کررہے ہیں؟۔

متعلقہ خبریں