شاہد خاقان عباسی کی گرفتاری پر مولانا فضل الرحمان بھی بول پڑے

2019 ,جولائی 18



ملتان (مانیٹرنگ رپورٹ) جمعیت علمائے اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کی گرفتاری کوئی نئی بات نہیں ہے، برائے نام اورجعلی وزیراعظم کے خلاف کیسز پر ہر طرف خاموشی ہے،‏ یہ لوگ اپنے اقتدار کو طول دینے کیلئےامریکا بھیک مانگنے جا رہے ہیں، مقتدر ادارے عوامی رائے کااحترام کرتے ہوئے تصادم سے گریز  کریں۔ ملتان میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئےمولانا فضل الرحمن نےکہا کہ‏شاہد خاقان عباسی کی گرفتاری کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں،نیب بطور ادارہ حزب اختلاف کے خلاف مسلسل استعمال ہورہا ہے اپوزیشن رہنماؤں کوگرفتار کرکے جیل میں ڈالنا انتقامی عمل ہے، حکومت کے خلاف بولنے پرانہیں انتقام کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔

    ان کا کہناتھا کہ‏یہ لوگ اپنے اقتدار کو طول دینے کیلئے امریکا بھیک مانگنے جارہے ہیں،قادیانی لابی بھی متحرک ہوچکی ،امریکا ختم نبوتﷺ  قانون کے حوالے سے پاکستان پر دباؤ ڈالنا چاہتا ہے جس پر صدر ڈونلڈٹرمپ کی گفتگو بھی سامنے آچکی ہے،قوم کو بتایا جائے کہ  وزیراعظم امریکا کس ایجنڈے پرجارہے ہیں؟قوم ہوشیار رہے ہم کسی قیمت بین الاقوامی ایجنڈا ملک پر مسلط نہیں ہونے دیں گے ۔مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ حزب اختلاف کےخلاف نیب مسلسل استعمال ہو رہاہے، نیب کی یک طرفہ کارروائیاں جاری ہیں، ہم ایسی کارروائیوں کی شدید مذمت کرتے ہیں، تاجروں کی کامیاب ہڑتال نے حکومت کی پالیسی کو مسترد کردیاہے، ہرشخص نااہل حکومت کافوری استعفیٰ چاہتا ہے۔

    انہوں نے کہا کہ عقیدہ ختم نبوتﷺ کےعنوان سے12تاریخی ملک گیرملین مارچ مکمل کرچکے ہیں،25 جولائی پشاوراور 28 جولائی کو  کوئٹہ میں ملین مارچ ہوگا،پاکستان کی معاشی صورتحال پر عوام بے چین ہے جمہوری دنیا میں عوام کی رائے کو دیکھا جاتا ہے،مقتدر ادارے عوام کی رائے کااحترام کریں اور تصادم سےگریز  کریں ۔

    متعلقہ خبریں