پاک فوج پر بزدلانہ حملے کے بعد محسن داوڑ کے افغانستان فرار ہو جانے کی اطلاعات، خبر نے ہلچل مچا دی

2019 ,مئی 27



لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) پاک فوج پر بزدلانہ حملے کے بعد محسن داوڑ کے افغانستان فرار ہو جانے کی اطلاعات، پی ٹی ایم رہنما گزشتہ روز پاک فوج کی چیک پوسٹ پر حملہ کروانے کے بعد فرار ہو گیا تھا اور تاحال مفرور ہے۔  کچھ ذرائع نے دعویٰ کیا ہے کہ پاک فوج پر بزدلانہ حملے کے بعد محسن داوڑ کے افغانستان فرار ہو جانے کی اطلاعات ہیں۔پی ٹی ایم رہنما گزشتہ روز پاک فوج کی چیک پوسٹ پر حملہ کروانے کے بعد فرار ہو گیا تھا اور تاحال مفرور ہے۔ محسن داوڑ نے گزشتہ روز مظاہرین کو مشتعل کرکے پاک فوج کی چیک پوسٹ پر حملہ کروایا تھا۔ بعد ازاں پاک فوج کی جوابی کاروائی کے دوران محسن داوڑ بزدلانہ انداز میں انسانی ڈھال کا استعمال کرتے ہوئے فرار ہو گیا تھا۔جبکہ اس کا ساتھی علی وزیر اور دیگر گرفتار کر لیے گئے تھے۔محسن داوڑ کی تاحال تلاش جاری ہے، تاہم اب کچھ اطلاعات آئی ہیں کہ محسن داوڑ افغانستان فرار ہو گیا ہے۔ تاہم اس حوالے سے پاک فوج یا حکومت کی جانب سے تاحال تصدیق نہیں کی گئی۔ دوسری جانب شمالی وزیرستان میں چیک پوسٹ پر حملے کی ایف آئی آر کی تفصیلات سامنے آگئیں۔ مقدمے میں دہشتگردی، 302، اور 324سمیت 10دفعات شامل کی گئیں۔ایف آئی آر کے متن کے مطابق پی ٹی ایم ارکان اسمبلی محسن داوڑ اور علی وزیر نے مسلح ساتھیوں کے ہمراہ چیک پوسٹ پر حملہ کیا۔ایف آئی آرمیں محسن داوڑ اور علی وزیر سمیت 9 افراد کو نامزد کیا گیا ہے۔ دوسری جانب پی ٹی ایم کے رہنماء اور رکن قومی اسمبلی علی وزیر کو انسداد دہشتگردی عدالت بنوں میں پیش کردیا گیا، علی وزیرپاک فوج کی چیک پوسٹ پر حملہ کرنے کا الزام ہے،خرقمر میں چیک پوسٹ پرحملہ کرنے اور دہشتگردوں کو چھڑوانے کے الزام میں علی وزیر کو گرفتار کرلیا گیا تھا۔

متعلقہ خبریں