پی سی بی کا کھلاڑیوں سے نیا کنٹریکٹ ۔۔۔۔ راشد لطیف نے ایک نہیں کئی سوالات اٹھا دیے

2019 ,اگست 8



لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان راشد لطیف نے سلیکشن کمیٹی کے تقرر سے قبل ہی سینٹرل کنٹریکٹ کے اعلان پر سوالیہ نشان لگادیا۔سابق کپتان راشد لطیف نے سلیکشن کمیٹی تشکیل دیے جانے سے قبل ہی 19 کرکٹرز کے لئے سینٹرل کنٹریکٹ کا اعلان کیے جانے کے فیصلے پر حیرت کا اظہار کیا ہے، سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر اپنے پیغام میں انہوں نے کہا کہ ا ب سلیکشن کمیٹی کی کیا ضرورت، خود ہی سلیکشن کرلی، اب سلیکشن کمیٹی کو ان کھلاڑیوں میں سے ہی ٹیموں کا انتخاب کرنا ہوگا، سلیکشن کمیٹی کی مشاورت سے یہ کام کیا جاتا تو زیادہ اچھا ہوتا۔یاد رہے کہ انضمام الحق کی رخصتی کے بعد پی سی بی کو نئے چیف سلیکٹر کا انتخاب کرنا ہے، اس عہدے کیلیے امیدواروں میں محسن حسن خان کے ساتھ راشد لطیف اور شعیب اختر کا نام بھی لیا جا رہا ہے ذرائع کے مطابق پاکستان کرکٹ بورڈ نے حتمی فیصلہ کر لیا ہے کہ آئندہ سینٹرل کنٹریکٹ میں کھلاڑیوں کی تعداد کو کم کیا جائے گا یہ تعداد 15 سے 17 کے قریب ہو سکتی ہے، ایک تجویز ہے کہ کھلاڑیوں کی تعداد کم کر کے معاوضے بڑھا دیئے جائیں۔ کھلاڑیوں کی تنخواہوں اور میچ فیس میں 20 فیصد اضافہ کرنے پر اتفاق ہو چکا ہے، ٹیسٹ ٹیم میں ملک کی نمائندگی کرنے والوں کی میچ فیس میں زیادہ اضافے پر بھی تبادلہ خیال ہو گا۔ذرائع کے مطابق قومی کرکٹرز کے نئے سنٹرل کنٹریکٹ کے لیے ابتدائی اجلاس جمعرات کو ہو گا۔ کرکٹرز کی کیٹگریز میں بھی تبدیلی کیے جانے کا امکان ہے۔دوسری طرف تینوں فارمیٹ میں مستقل کھیلنے والے کرکٹرز کو سینٹرل کنٹریکٹ میں ترجیح دی جائے گی۔ اس سے ظاہر ہو رہا ہے کہ آئندہ سینٹرل کنٹریکٹ میں آل راؤنڈرز شعیب ملک، محمد حفیظ اور فاسٹ باؤلر محمد عامر سمیت کئی کرکٹرز کنٹریکٹ سے فارغ ہو جائیں گے جبکہ کئی کھلاڑیوں کی کیٹگریز میں ردو بدل بھی کیے جانے کا امکان ہے۔

متعلقہ خبریں