نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ میں قرآن پاک کی جن آیات کی تلاوت کی گئی اُن میں اللہ کا کیا حکم ہے؟آپ بھی جانیے

2019 ,مارچ 21



نیوزی لیںڈ (مانیٹرنگ ڈیسک): نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ میں دو مساجد پر آسٹریلوی شہری نے اندھا دھند فائرنگ کی جس کے نتیجے میں 50 افراد شہید جبکہ متعدد افراد زخمی ہوئے۔ اس سانحہ کے بعد نیوزی لینڈ کی وزیراعظم جیسنڈا آرڈن اور نیوزی لینڈ کی عوام نے مسلم کمیونٹی کے ساتھ  اظہار یکجہتی کیا اور اس سانحہ کی شدید مذمت کی۔ مسلمانوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے 19 مارچ کو نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ کے اجلاس کا آغاز تلاوت قرآن پاک سے کیا گیا۔ اجلاس کے آغاز میں قرآن پاک کی دوسری سورۃ ، سورۃ البقرۃ کی آیت نمبر 153 تا آیت نمبر 155 کی تلاوت کی گئی۔ ان آیات کا ترجمہ یہ ہے:” اے ایمان والو! صبر اور نماز سے مدد حاصل کرو۔بے شک اللہ صبر کرنے والوں کے ساتھ ہے۔ اور جو لوگ اللہ کے راستے میں قتل ہوں اُن کو مردہ نہ کہو، دراصل وہ زندہ ہے ، مگر تم کو (اُن کی زندگی کا) کا احساس نہیں ہوتا۔اور دیکھو ہم تمہیں آزمائیں گے ضرور، (کبھی) خوف سے،اور(کبھی) بھوک سے، اور (کبھی) مال و جان اور پھلوں میں کمی کر کے۔اور جو لوگ(ایسے حالات میں) صبر سے کام لیں اُن کو خوشخبری سُنا دو۔’ یاد رہے کہ 19 مارچ کو نیوزی لینڈ کی پارلیمنٹ کے اجلاس کے آغاز پر وزیراعظم جیسنڈا نے اجلاس سے خطاب کیا اور اپنی تقریر کے آغاز پر شرکا کو اسلام علیکم کہا۔ اس اجلاس میں دوسروں کی جان بچاتے ہوئے شہید ہونے والے بہادر پاکستانی شہری نعیم راشد کو خراج عقیدت بھی پیش کیا گیا تھا۔ یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ نیوزی لینڈ کی حکومت اور عوام نے سانحہ کرائسٹ چرچ کے بعد مسلم کمیونٹی سے ہر ممکنہ حد تک اظہار یکجہتی کیا ہے ۔نیوزی لینڈ کی وزیراعظم نے جمعہ کے روز اذان کو سرکاری ٹی وی اور ریڈیو پر نشر کرنے کا بھی اعلان کیا

متعلقہ خبریں