چیئرمین ایف بی آر نے وزیراعظم عمران خان کے بارے میں ایسی کیا بات کہی تھی جس کے بعد انھیں عہدے سے ہٹا دیا گیا ؟ اندرکی خبر آگئی

2019 ,مئی 4



اسلام آباد(مایٹرنگ ڈیسک) حکومت نے سٹیٹ بینک آف پاکستان کے گورنر اور فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے چیئرمین کو عہدوں سے ہٹادیا اور اب چیئرمین ایف بی آر کو عہدے سے ہٹانے کی ممکنہ وجہ بھی سامنے آگئی . روزنامہ جنگ کے وزیراعظم ہاﺅس کے ذرائع کے مطابق چیئرمین ایف بی آر جہانزیب خان کی تبدیلی کا فیصلہ سابق وزیر خزانہ اسد عمر کی وزارت کے دوران ہی ہوگیا تھا، چیئرمین ایف بی آر نے اثاثہ جات ڈیکلریشن سکیم کو اپنانے سے انکار کیا تھا اور موقف اپنایا کہ مجوزہ سکیم وزیراعظم کی ہدایت پر تیار کی گئی .ذرائع کے مطابق چیئرمین ایف بی آر کے اس موقف پر وزیراعظم نے اظہار ناراضی کیا اور شیخ رشید نے چیئرمین ایف بی آر پر جملہ کسا تھا کہ سکیم بنانے والے اس سے لاتعلقی کا اظہار کررہے ہیں.رپورٹ کے مطابق چیئرمین ایف بی آر جہانزیب خان کا تعلق پا کستان ایڈمنسٹر یٹو سروس سے ہے ، ان کی تقرری مو جودہ حکو مت نے ہی کی تھی، ان پر اسلئے تنقید کی جارہی ہے کہ ایف بی آر کو رواں مالی سال کے ہدف کو حاصل کرنے میں نا کامی کا سامنا ہے ، اب تک 350ارب روپے کا شارٹ فال ہے جو جون تک 450ارب روپے تک پہنچ سکتا ہے. گورنر اسٹیٹ بنک اور چیئرمین ایف بی آر کو تبدیل کرنے کے بعد مزید تبدیلیوں کا امکان بھی ظاہر کیا جا ر ہا ہے، یاد رہے کہ آج کی بڑی خبر یہ تھی کہ گورنر اسٹیٹ بینک طارق باجوہ نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا جبکہ چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریوینیو (ایف بی آر) جہانزیب خان کو عہدے سے برطرف کردیا گیا۔ذرائع گورنر بینک کے مطابق گورنراسٹیٹ بینک طارق باجوہ نے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے، وزیراعظم نے گورنر اسٹیٹ بینک سے استعفیٰ طلب کیا تھا۔طارق باجوہ نے اپنا استعفیٰ وزارت خزانہ کے توسط سے وزیراعظم سیکریٹریٹ کو بھجوایا۔طارق باجوہ کو سابق صدر ممنون حسین نے 7 جولائی 2017 کو تین سال کے لیے اسٹیٹ بینک کا صدر بنایا تھا، ان کی مدت جولائی 2020 میں ختم ہونا تھی۔ علاوہ ازیں چیئرمین ایف بی آر جہانزیب خان کو بھی عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے۔ ذرائع وزیراعظم ہاؤس کے مطابق چیئرمین ایف بی آر جہانزیب خان کی تبدیلی کا فیصلہ سابق وزیر خزانہ اسد عمر کی وزارت کے دوران ہی ہوگیا تھا۔ذرائع کے مطابق چیئرمین ایف بی آر نے اثاثہ جات ڈیکلریشن اسکیم کو اپنانے سے انکار کیا تھا، چیئرمین ایف بی آر کا مؤقف تھا کہ اسکیم وزیراعظم کی ہدایت پر تیار کی گئی ہے۔ذرائع کے مطابق چیئرمین ایف بی آر کے اس مؤقف پر وزیراعظم نےاظہار ناراضی کیا اور شیخ رشید نے چیئرمین ایف بی آر پر جملہ کسا تھا کہ اسکیم بنانے والے اس سے لاتعلقی کا اظہار کررہے ہیں۔واضح رہےکہ گزشتہ دنون وفاقی کابینہ کے اجلاس میں اثاثہ ڈیکلریشن اسکیم کو غور کے لیے پیش کیا گیا تھا تاہم اس دوران چند وزراء نے اسکیم پر اعتراض کیا جب کہ وزیراعظم نے بھی اسکیم کو پی ٹی آئی کے منشور کے خلاف قرار دیا اور اسکیم پر مزید مشاورت کی ہدایت کی تھی، اجلاس میں وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ ایسی ایمنسٹی اسکیمیں پی ٹی آئی کے منشور کے خلاف تھیں، اگر اثاثہ جات ظاہر کرنے کی ایمنسٹی اسکیم لانی ہی ہے تو قوم کو اعتماد میں لینا ہو گا کہ اس کی ضرورت کیوں پیش آئی ہے؟ جب تک پوری کابینہ مطمئن نہیں ہو گی اسے منظور نہیں کریں گے۔

متعلقہ خبریں