نوازشریف کے دور میں جسٹس سجاد کے بیڈ روم فونز بھی ٹیپ ہوتے تھے: چودھری شجاعت

2017 ,جون 5



لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک): بہت دیر کی مہرباں آتے آتے۔ یہ بات آپ کے علم میں تھی تو پہلے کیوں یاد نہیں آئی۔ لگتا ہے چودھری جی کا حافظہ کمزور ہو گیا۔ انہیں رہ رہ کر گزری ہوئی باتیں یاد آتی ہیں۔ اب کہیں ایسا نہ ہو کسی دن چودھری صاحب یاد ماضی میں کھوئے ہوئے میاں نوازشریف سے ملنے چلے جائیں کہ کابینہ کا اجلاس کیوں نہیں بلایا جا رہا۔ باقی سارے وزرا کہاں چلے گئے ہیں۔ کیوں کہ جناب کو یاد ہو کہ نہ یاد ہو حضرت خود اس دور میں وزیر داخلہ تھے۔ ہو سکتا ہے یہ ٹیلی فون بھی انہی کے حکم پر ہی ٹیپ ہوتے ہوں تاکہ وزیراعظم نوازشریف کو رپورٹ دی جا سکے کہ چیف جسٹس کیا کر رہے ہیں۔ بہرحال بات ہو رہی تھی بھول چوک کی اسی عالم بھلیکھے میں چودھری جی وہاں سے پرویز الٰہی کو بھی فون کھڑکا دیں کہ آپ ابھی میاں صاحب کے گھر کیوں نہیں پہنچے مجھے لینے۔ تو جواب میں پرویز الٰہی صاحب ماتھے سے پسینہ پونچھتے ہوئے کہہ رہے ہوں۔ جناب آپ جہاں ہیں رک جائیں۔ خدارا کچھ اور نہ کرنا کچھ اور نہ بولنا میں رافع کو بھیج کر آپ کو منگوا رہا ہوں۔ خیر یہ تو بات سے بات نکلتی ہے۔ یاداشت پر بس اتنا ہی زور ڈالا جائے جتنا ضروری ہے۔ ورنہ نجانے کون کون سے افسانے اور کہانیاں یاد آ جاتی ہیں۔ جس کے بعد کہیں....

یاد ماضی عذاب ہے یا رب

چھین لے مجھ سے حافظہ میرا

والا شعر نہ دہرانا پڑے۔

متعلقہ خبریں