داعش کے خوفناک بھوت

2017 ,جولائی 12



لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک): عراقی افواج نے گزشتہ روز موصل میں داخل ہوکر شہر کا کنٹرول سنبھال لیا۔ یوںبرسوں بعد داعش کے اس خودساختہ دارالحکومت میں قائم ان کی خودساختہ خلافت اپنے انجام کو پہنچ گئی۔ اب معلوم نہیں داعش کے خلیفہ بغدادی صاحب کہاں غائب ہیں۔ انکے بارے میں متضاد اطلاعات ہیں، کسی کے مطابق وہ زخمی ہوئے ہیں اور کسی کے مطابق جان بچا کر مولوی عبدالعزیز کی طرح بھیس بدل کر فرار ہوگئے ہیں۔ داعش کی اس خلافت میں اگر عوام کو کوئی ایک آدھ سہولت ہی میسر ہوتی تو موصل کے عوام روتے ہوئے داعش والوں کو رخصت کرتے۔ مگر یہاں تو انہوں نے جس ظلم و وحشت کا بازار گرم کیا تھا، اس کے نتیجے میں موصل کی بچی کھچی آبادی نے جو داعش کے ہاتھوں مرنے سے بچ گئی ہے، جشن مناتے ہوئے ناچتے گاتے ہوئے عراقی افواج کوخوش آمدید کہا اور داعش سے نجات پر جی بھر کر جشن منایا۔ یوں داعش کے خوفناک بھوت کے ہاتھوں جو مسلمان بھائیوں اور بہنوں کے جان اور مال کو ہضم کررہا تھا، تباہی و بربادی کی ایک داستان ختم ہوئی۔ اب عراق میں بچے کھچے داعش جنگلی چوہوں کی طرح کہیں نہ کہیں اودھم مچائیں گے اور پھر اپنے بلوں میں چھپ جایا کرینگے۔ فی الحال افغانستان کے پہاڑوں میں چھپے موش (پہاڑی چوہے) یہی کام کررہے ہیں۔ انکی سرپرستی اگر بند ہوجائے، انہیں ملنے والی رسد کے راستے ختم کئے جائیں تو یہ آپس میں ہی لڑبھڑ کر ختم ہوسکتے ہیں۔ مگر ہمارے بعض نادان مسلم حکمران اپنے دشمنوں کیخلاف انہیں استعمال کرنے کیلئے انکی روٹی پانی کا بندوبست کرتے رہتے ہیں جس کی وجہ سے یہ ختم نہیں ہوتے البتہ طاقت میں آکر اپنے مربی کو بھی کاٹ کھانے سے باز نہیں آتے۔

متعلقہ خبریں