تصویر بولتی ہے

2017 ,جولائی 24



لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک): کامونکی کا رہائشی محمد نواز 55 برس کی عمر میں پینسلیں فروخت کرتا ہے۔ وزن زیادہ ہونے کی وجہ سے اب کوئی مزدوری نہیں کر سکتا۔ چار بچے ہیں۔ ان کے لیے روزی روٹی تو کمانی ہے۔ اس لیے اردو بازار میں چائنہ کا مال فروخت کرتا ہے۔ کسی بھی دکان سے پنسل خریدیں تو 7 سے 10 روپے سے کم نہیں ملتی۔ لیکن میں چائنہ کی پنسل صرف تین روپے میں فروخت کرتا ہوں۔ حالانکہ اس دور میں بچے بھی تین روپے نہیں لیتے۔ مجھے اللہ تعالیٰ اسی میں برکت دے رہا ہے اور مہنگائی کے اس دور میں گزارہ ہو رہا ہے۔

متعلقہ خبریں