وزیراعظم کا مظفرآباد میں جلسہ سے خطاب۔۔۔ جانئے اس خبر میں

2019 ,ستمبر 13



مظفر آباد (مانیٹرنگ رپورٹ) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ نریندر مودی ایک بزدل انسان ہے، بزدل انسان ایسا ظلم کرتا ہے جو بھارت کی 9 لاکھ فوج آج کشمیریوں پر کررہی ہے، جس میں بھی انسانیت ہوتی ہے کہ وہ کبھی یہ نہیں کرسکتا مگر میں یہ پغام دینا چاہتا ہوں کہ نریندر مودی کشمیریوں پر جتنا ظلم کرلو کامیاب نہیں ہوگے.

آزاد کشمیر کے دارالحکومت مظفرآباد میں کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے منعقد جلسے سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ میں نے دنیا میں کشمیر کا سفیر بننے کا فیصلہ کیونکہ میں پاکستانی ہوں، مسلمان ہوں اور ایک انسان ہوں.

انہوں نے کہا کہ کشمیر کا مسئلہ انسانیت کا مسئلہ ہے، 40 روز سے ہمارے کشمیری بھائی، بہنیں، بزرگ اور بچے کرفیو کی زد میں ہیں.وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ایک دلیر انسان کبھی عورتوں اور بچوں پر یہ ظلم نہیں کرسکتا جو نریندر مودی اور اس کی جماعت آر ایس ایس کررہی ہے.

عمران خان نے کہا کہ نریندر مودی آپ کشمیریوں پر جتنا ظلم کرلیں کامیاب نہیں ہوں گے کیونکہ کشمیر کی عوام میں موت کا خوف ختم ہوچکا ہے، ان کا ڈر چلا گیا ہے، آپ جو مرضی کرلیں انہیں شکست نہیں دے سکتے. انہوں نے کہا کہ نریندر مودی بچپن سے آر ایس ایس کا رکن ہے، اس جماعت کے اندر مسلمانوں کی نفرت بھری ہوئی ہے‘انہوں نے کہا کہ 100 سال پہلے بننے والی جماعت کے 2 مقصد تھے کہ بھارت صرف ہندوﺅں کے لیے ہے باقی مسلمانوں، عیسائیوں اور دیگر اقلیتوں کو برابر شہری نہیں سمجھتے.عمران خان نے کہا کہ آر ایس ایس کے دلوں میں مسلمانوں کے لیے نفرت بھری ہوئی ہے کہ اگر مسلمانوں نے یہاں حکومت نہ کی ہوتی تو ہندو قوم نجانے کتنی بڑی سپر پاور ہوتی، ان خیالات کی وجہ سے آر ایس ایس ہمیشہ سے مسلمانوں کے خلاف تھی.

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ میں ساری دنیا میں کشمیر کا سفیر بن کر جاﺅں گا اور دنیا کو بتاﺅں گا کہ آر ایس ایس کی اصلیت کیا ہے، جس طرح ہٹلر اور نازی پارٹی نے جرمنی میں اقلیتوں پر ظلم کیا اور انسانوں کا قتل عام کیا یہ بھی اسی راستے پر چل رہے ہیں.انہوں نے کہا کہ امریکا میں سینیٹرز نے صدر ٹرمپ کو خط لکھا ہے کہ کشمیر میں مداخلت کریں، میں بھی جنرل اسمبلی اجلاس میں اپنے کشمیریوں کو مایوس نہیں کروں گا، ان کے لیے ایسے کھڑا ہوں گا کہ آج تک ان کے لیے کوئی اس طرح کھڑا نہیں ہوا ہوگا.وزیراعظم نے کہا کہ 58 ملکوں نے پاکستان کے موقف کی حمایت کی، او آئی سی نے کہا کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں جاری کرفیو ختم کرے، آئندہ ہفتے نیویارک میں جنرل اسمبلی کے اجلاس میں مسئلہ کشمیر پر بات کروں گا‘ کشمیر کا مسئلہ بین الاقوامی مسئلہ بن چکا ہے، پوری دنیا کے سوا ارب مسلمان آج کشمیر کی طرف دیکھ رہے ہیں.

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستان نے بھارت کا جہاز گرایا،پائلٹ واپس بھجوانے پر مودی نے کہا دیکھو پاکستان ڈرگیا ہے، مودی کان کھول کر سن لو ایمان والا موت سے نہیں ڈرتا، بھارت کاپائلٹ ڈر کر نہیں امن کے لیے واپس کیا. انہوں نے کہا کہ کشمیر پر ہونے والے ظلم کا ردعمل آئےگا، مودی کو اینٹ کا جواب پتھر سے ملے گا، دنیا کو کہتا ہوں کہ ہندوستان کے ہٹلر کو روکے.وزیراعظم نے کہا کہ کشمیریوں پر جو ظلم ہو رہا ہے اس سے انتہاپسندی بڑھے گی، ظلم پر ہر انسان ذلت کی زندگی پر موت کو ترجیح دیتاہے، اگر مجھے اس طرح بند کیا جاتا تو میں اس ظلم کے خلاف لڑتا، جب انسانوں کو دیوار سے لگا دیا جائے تو وہ انتہاپسندی کی طرف جاتے ہیں.

انہوں نے کہا کہ آج سوا ارب مسلمان کشمیر کی طرف دیکھ رہے ہیں، کشمیر پر ہونے والے ظلم کا ردعمل آئے گا، مودی کو اینٹ کا جواب پتھر سے ملے گا، دنیا کو کہتا ہوں کہ ہندوستان کے ہٹلر کو روکے، یہ قوم آخری وقت تک تمہارا مقابلہ کرےگی.وزیراعظم عمران خان نے حاضرین کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ مجھے پتہ ہے آپ لائن آف کنٹرول کی طرف جانا چاہتے ہیں لیکن ابھی لائن آف کنٹرول کی طرف نہیں جانا جب تک میں آپ کو نہیں بتاﺅں گا، میں آپ کو بتاﺅں گا کہ کب جانا ہے.

عمران خان نے کہا کہ پہلے مجھے اقوام متحدہ جانے دیں ، دنیا کے راہنماﺅں کو بتانے دیں کشمیر کا مقدمہ لڑنے دیں اور انہیں بتانے دیں کہ اگر کشمیر کا مسئلہ حل نہیں کیا گیا تو اس کا اثر ساری دنیا پر جائے گا.عمران خان نے کہا کہ مودی بھارتی مسلمانوں کو پیغام دے رہا ہے کہ بھارت میں آپ کے حقوق‘جانیں‘مال‘عزتیں کچھ بھی محفوظ نہیں رہا ، بھارت صرف ہندوﺅں کاہے، آرایس ایس کے غنڈے مسلمانوں کو قتل کرتے ہیں ،مقبوضہ کشمیر کے عوام دنیا کے سوا ارب مسلمان کی طرف مدد کیلئے دیکھ رہے ہیں ، مگر ان کی حکومتیں تجارت کی وجہ سے بھارت کی طرف دیکھ رہی ہیں.

بھارت کو جواب دینے پرمسلح افواج، پاک فضائیہ کو سلام پیش کرتاہوں ، بھارتی پائلٹ واپس کرکے پیغام دیا جنگ نہیں مذاکرات چاہتے ہیں‘انہوں نے کہا کہ مودی کشمیریوں کو انتہا کی طرف دھکیل رہا ہے ‘ہندوستان کے 20 کروڑ مسلمانوں کو پیغام دیا جارہا ہے کہ بھارت میں ان کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے، کشمیر میں مسلمان اکثریت کو 9 لاکھ فوجیوں کے ذریعے اقلیت میں تبدیل کرنے کی سازش ہورہی ہے‘انہوں نے کہا کہ بھارتی حکومت کے انتہاپسندانہ فیصلوں سے کشمیر کے لوگ کھڑے ہوں گے اورہندوستان کے مسلمانوں کی جانب سے شدید ردعمل آئے گا .وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مودی ہمت ہے تو کشمیر سے کرفیو اٹھاﺅاور تماشہ دیکھو‘ آج عمران خان بیرونی دنیا کو تقابلی جائزہ پیش کرنے کے لیے مظفر آباد آئے ہیں.  وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ دنیا دیکھ سکتی ہے کہ آج آزاد کشمیر کے دارالحکومت مظفر آباد میں کھلے آسمان تلے کشمیریوں سے پاکستان کا وزیراعظم مخاطب ہے.

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میں چیلنج کرکے پوچھنا چاہتا ہوں کہ مودی کیا تم مقبوضہ کشمیر کے دارالحکومت میں کشمیریوں سے خطاب کرسکتے ہو؟ اگر جرات ہے، ہمت ہے اور سمجھتے ہو کہ کشمیر کے لوگوں کے لیے کوئی کارنامہ کیا ہے تو مودی کرفیو اٹھاﺅ اور تماشہ دیکھو. وزیراعظم عمران خان کی جانب سے مظفر آباد میں کشمیریوں سے اظہار یکجہتی اور دنیا کی توجہ بھارتی مظالم کی جانب مبذول کروانے کے لیے جلسے کا انعقاد کیا گیا ہے‘مظفر آباد میں منعقد جلسے میں وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیر دفاع پرویز خٹلک اور وفاقی وزیر برائے ریلوے شیخ رشید موجود ہیں.

وزیراعظم عمران خان کی حمایت اور کشمیریوں سے اظہارِ یکجہتی کے لیے اداکار اور کھلاڑی بھی جلسے میں شریک ہیں جن میں شاہد آفریدی، ہمایوں سعید، جاوید شیخ، فاخر محمود، حریم فاروق، مایا علی اور دیگر شامل ہیں. خیال رہے کہ 2 روز قبل وزیراعظم عمران خان نے مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی افواج کے محاصرے کی طرف دنیا کی توجہ مبذول کروانے اور کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے مظفرآباد میں جلسے کا اعلان کیا تھا.

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک ٹوئٹ میں وزیراعظم عمران خان نے لکھا تھا کہ میں جمعہ 13 ستمبر کو مظفرآباد میں بڑے عوامی اجتماع سے خطاب کروں گا. انہوں نے لکھا تھا کہ جلسے کا مقصد غاصب بھارتی افواج کی جانب سے مقبوضہ جموں و کشمیر کے جاری محاصرے کے بارے میں دنیا کو پیغام بھجوانا ہے اور اہل کشمیر کو یہ بتانا ہے کہ پاکستان پوری ثابت قدمی سے ان کے ساتھ کھڑا ہے.

متعلقہ خبریں