احتساب عدالت میں نون لیگی رہنماﺅں کی پیشی

2021 ,دسمبر 13



سابق وزیر اعلی پنجاب اور مسلم لیگ ن کے صدر میاں شہباز شریف رمضان شوگر ملز، منی لانڈرنگ اور آشیانہ ریفرنسز کیسزمیں دو احتساب عدالتوں میں پیش ہوئے۔ آشیانہ ہاوسنگ اور رمضان شوگر مل کیس کی سماعت کورٹ نمبر پانچ میں ملک ساجد حسین اعوان نے جبکہ منی لانڈرنگ کیس میں کورٹ نمبر دو کے جج نسیم احمد ورک نے کی۔اس موقع پر مسلم لیگ نون کے رہنما حمزہ شہباز نے رمضان شوگر مل ریفرنس میں بریت کی درخواست دائر کردی۔ منی لانڈرنگ ریفرنس میں احد چیمہ سمیت دیگر ملزمان بھی عدالت میں پیش ہوئے۔ سماعت کے دوران عدالت نے شہباز شریف کے شریک ملزم علی احمد خان کو ریفرنس کی کاپی فراہم کی، عدالت نے ملزم کو آئندہ سماعت پر فرد جرم کے لیے طلب کر لیا۔ عدالت نے منی لانڈرنگ ریفرنس پر کارروائی 20 دسمبر تک ملتوی کردی آشیانہ ریفرنس میں نیب نے ایک بار پھر شہباز شریف کے شریک ملزم کی بریت کی درخواست پر جواب جمع نہ کرایا اور عدالت سے جواب جمع کرانے کے لیے مہلت مانگ لی احتساب عدالت نے نیب کی استدعا پر کارروائی 20 دسمبر تک ملتوی کر دی۔ احتساب عدالت میں حمزہ شہباز نے رمضان شوگر مل ریفرنس میں نیب کے ترمیمی آرڈنینس کو بنیاد بنا کر بریت کی درخواست دائر کی۔ درخواست میں حمزہ شہباز نے موقف اپنایا کہ رمضان شوگر ملز کے لیے نالہ بنانے کے الزام میں ریفرنس دائر کیا گیا،نیب ریفرنس کی کوئی بنیاد نہیں،نیب کا یہ ریفرنس بد نیتی اور سیاسی بنیادوں پر مبنی ہے۔ حمزہ شہباز نے درخواست میں کہا کہ نیب کا یہ ریفرنس موجودہ حکومت کی ایما پر بنایا گیا ہے، بنایا گیا نالہ رمضان شوگر ملز یا کسی پرائیویٹ ادارے کی ملکیت نہیں، مجھے رمضان شوگر ملز کا سی ای او ہونے کی بنیاد پر ملزم بنایا گیا۔ ان کا درخواست میں موقف ہے کہ رمضان شوگر ملز کا اکیلا مالک نہیں، کیس سیاسی بنیادوں پر بنایا گیا ہے،جرم ثابت ہونے کا کوئی امکان نہیں، عدالت بری کرنے کا حکم دے۔ واضح رہے کہ احتساب عدالت میں نون لیگی رہنماﺅں کی پیشی سے قبل عدالت کے باہر کارکنان کی بڑی تعداد موجود تھی۔

متعلقہ خبریں