سعودی حکومت نے تارکین وطن کی کمردوہری کر دی۔

2017 ,جون 15



لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک):چلئے جی پہلے سعودی عرب میں ملازمت کرنے والے تارکین وطن کون سی سونے کی کان لوٹ رہے تھے کہ اب سعودی حکومت نے ان بیچاروں پر 100ریال ماہانہ ٹیکس لگا کر ان کی کمر اور دوہری کر دی ہے۔ فیصلہ کے مطابق اس برس یہ رقم 100ریال ہے اگلے برس 200اور تیسرے برس 400ریال ہو جائے گی۔ یوں بتدریج بڑھنے سے تارکین وطن خود بخود اپنے اپنے وطن ہجرت پر مجبور ہوں گے۔ پہلے ہی وہاں کام کرنے والے ملازم اپنے کفیلوں کی مہربانیوں کا بھرپور لطف اٹھا رہے تھے کہ اب حکومت بھی ان کی پرآسائش زندگی کو مزید پرلطف بنانے پر تل گئی ہے۔ گزشتہ روز مشروبات کی قیمت دوگنی کی گئی جس سے گرانی مزید بڑھ جائے گی۔ اس کا اثر بھی ظاہر ہے تارکین وطن پر بھی ہو گا۔ جن کے اخراجات بڑھیں گے۔ ویسے بھی سعودی عرب میں پٹرول سستا اور پانی مہنگا ہے۔ یہ سب شاخسانہ مسلمانوں کی باہمی خانہ جنگی کا ہے۔ نہ یمن کی سعودی عرب سے لڑائی ہوتی نہ یہ مشکل حالات تارکین وطن کو دیکھنا پڑتے۔ سعودی عرب کے ساتھ یمن اور قطر کے بگڑتے تعلقات کا سارا بوجھ تارکین وطن پر پڑ رہا ہے اور وہ بیچارے آہ تک نہیں کر سکتے کیوں کہ اف کرنے پر بھی ان کو پکڑے جانے اور تمام اثاثوں سے محرومی کے ساتھ ملک بدری کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ خدا کرے سعودی عرب کی دیگر ممالک سے نوک جھونک اور یمن سے ٹھوک ٹھاک ختم ہو ورنہ تارکین وطن کی واپسی آج نہیں تو کل کی بات لگتی ہے۔

متعلقہ خبریں