ضمیرِ نام ہے اس کا

2022 ,جون 23



 

میرے بھائی کو یقین تھا کہ نام کا شخصیت پر اثر ہوتا ہے۔ کہتے کہ "میرے اندر اگر مدد کا جذبہ ہے تو اس لئے کہ ابّا نے نام ہی اِمداد رکھا۔

بڑے بھائی نمازی اور نام بھی *زاہِد*۔

آپا کا نام نَفِیسَہ تھا، اور مزاج کی بھی نفاست پسند،

مَنجَھلی کا نام صَاعِقہ رکھا گیا ہر وقت آسمانی بِجلی کی طرح کڑکتی رہتی۔

چھوٹی کا نام مُسَرت تھا، خُوش رہتی اور سب میں خُوشیاں بِکھیرتی۔

لیکن! سب سے زیادہ ابّا کو چھوٹے بھائی کا نام رکھنے پر سُننے کو مِلیں۔

وہ ہر وقت سَویا ہی رہتا۔

ابا نے اُس کا نام ضَمِیر رَکھ دِیا تھا!

متعلقہ خبریں