باپ نے خود بیٹے کے ساتھ جنسی زیادتی کروائی

2016 ,دسمبر 29



نئی دہلی (شفق ڈیسک) بھارتی معاشرہ اپنے تئیں سیکولر اور لبرل بنتا تو ہے مگر درحقیقت بنیاد پرستی اسکی جڑوں میں بیٹھی ہے، جس کا ایک مظاہرہ گزشتہ کولکتہ میں دیکھنے کو ملا جہاں والدین نے کرائے کے اوباش بلا کر اپنے ہم جنس پرست بیٹے کیساتھ بدفعلی کروا ڈالی۔ انڈیاٹائمز کی رپورٹ کیمطابق 20 سالہ ہم جنس پرست سنجوئے (فرضی نام) اپنے جنسی پارٹنر کیساتھ رہائش پذیر تھا جس سے اسکے والدین لاعلم تھے۔ تاہم اسکے پارٹنر کے والدین اپنے بیٹے کی جنسی رغبت سے آگاہ تھے۔ جب سنجوئے کے والدین کو اس صورتحال کا علم ہوا تو انہوں نے کرائے کے غنڈوں کی خدمات حاصل کیں، جنہوں نے سنجوئے پر تشدد کیا اور اسے بدفعلی کا نشانہ بنایا۔ رپورٹ کیمطابق سنجوئے کی عادت کے متعلق معلوم ہونے پر والدین اسے ڈاکٹر کے پاس لے گئے جس نے اسے صحت مند قرار دے دیا۔ اسکے بعد اسکے والد نے کہا کہ اب بدفعلی کے ذریعے ہی اسکا علاج ہو گا، چنانچہ اس نے سنجوئے کو راہ راست پر لانے کیلئے چند اوباش نوجوان بلا کر اسکے ساتھ بدفعلی کروا دی۔ والدین کے چنگل سے فرار ہونے کے بعد سنجوئے نے ایک وکیل کی خدمات حاصل کیں اور اپنے والدین کیخلاف مقدمہ درج کروا دیا۔ اب وہ اپنے پارٹنر کے ساتھ رہ رہا ہے۔ بھارت میں ہم جنس پرستوں کے حقوق کیلئے کام کرنیوالی تنظیم ہم سفر ٹرسٹ کی منیجر کونینیکا رائے کا کہنا ہے کہ بھارت میں ہم جنس پرستوں پر تشدد معمول کی بات ہے۔ ملکی قانون کے باعث ہم جنس پرست آزادانہ زندگی نہیں گزار سکتے۔ اس ہم جنس پرست جوڑے کی کہانی اس کی ایک مثال ہے۔

متعلقہ خبریں