امریکہ کا سب سے معروف فوجی سب سے شرمناک کام کرتا رنگے ہاتھوں پکڑا گیا، سچ سامنے آنے پر پوری امریکی فوج شرم سے پانی پانی ہو گئی

2017 ,اپریل 17



واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی بحریہ کے معروف فوجی کے خلاف فوج میں ملازمت کیساتھ فحش فلموں میں اپنی اہلیہ اور دیگر اداکاراﺅں کے ساتھ’پارٹ ٹائم‘ کام کرنے کا انکشاف ہوا ہے جس پر فوجی حکام نے اس کے خلاف تحقیقات شروع کر دی ہیں۔امریکی نیوی سیل کے ترجمان کیپٹن جیسن سلاٹا کا کہنا ہے کہ ” ہم نے ان الزامات کے خلاف تحقیقات کا آغاز کر دیا ہے۔ نیول سپیشل وار فیئر کے اہلکاروں کیلئے فوج سے باہر ملازمت سے متعلق واضح قوانین ہیں اور اس کیساتھ ہی سروس کو بدنام کرنے والے روئیے کیلئے حدود قیود بھی موجود ہیں۔“ 
نیوی چیف سپیشل وار فیئر آفیسر جوزف جون شمٹ III عرف ”جے ووم“ 23 سال کا تجربہ رکھنے والا امریکی بحریہ کا سپاہی ہے جس نے ملازمت کے دوران خوب نام کمایا اور اس کے ساتھ ہی کسی طرح سے 29 فحش فلموں اپنی ”اداکاری کے جوہر“ بھی دکھائے اور یہ ”کارنامہ“ اس نے اپنی اہلیہ کے ساتھ مل کر کیا جو خود بھی فحش فلموں کی اداکارہ ہے۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق شمٹ نے مبینہ طور پر اپنی رئیل سٹیٹ کمپنی کیلئے حاصل کئے گئے بڑے قرضے واپس کرنے کی غرض سے فحش فلموں میں کام کا آغاز کیا۔ شمٹ کی اہلیہ جیڈ کا کہنا ہے کہ ”اس نے ہماری فیملی کی مدد کی۔ اس کی وجہ سے ہمیں بہت سارے مالی مسائل سے چھٹکارا ملا۔“ 
اس نے مزید کہا کہ ”ہم نے کبھی بھی فلم میں ’نیوی سیل‘ سے متعلق مناظر عکس بند نہیں کئے اور شمٹ نے کبھی یونیفارم بھی نہیں پہنا۔ میں بڑی ایمانداری سے یہ کہنا چاہتی ہوں کہ کسی کو بھی اس کی پرواہ نہیں کرنی چاہئے کیونکہ یہ ایک قانونی کام ہے اور بہت سے لوگ فحش فلمیں دیکھتے ہیں۔“ 
دوسری جانب یہ الزامات سامنے آنے کے بعد یہ تعین کرنے کیلئے محکمانہ تحقیقات کا آغاز کر دیا گیا ہے کہ آیا شمٹ فوج کے علاوہ دوسرے کام سے متعلق حکام کو نہ بتا کر نیوی سیل کے قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی کا مرتکب ہوا یا پھر اس کے سینئرز نے خاموشی سے اسے معاف کئے رکھا۔ 
دلچسپ امر یہ ہے کہ شمٹ کی ریٹائرمنٹ میں صرف 8مہینے ہی باقی رہ گئے ہیں مگر ان الزامات کے باعث ان کی پنشن اور دیگر مراعات خطرے میں پڑ گئی ہیں۔ بحریہ حکام نے شمٹ کو نوکری کے علاوہ ہربل سپلیمنٹ بیچنے کی اجازت نہیں دی تھی اور یہ الزام عائد کیا تھا کہ فحش فلموں میں اداکاری سے متعلق اس نے کوئی بھی دستاویزات جمع نہیں کرائیں۔واضح رہے کہ اس سے پہلے بھی امریکی فوج میں متعدد فحش سکینڈلز سامنے آتے رہے ہیں مگر یہ اپنی نوعیت کا پہلا سکینڈل ہے کیونکہ کسی بھی فوجی نے اس سے پہلے فحش فلموں میں اداکاری نہیں کی تھی۔ 
شمٹ پر لگے الزامات ثابت ہونے پر اس کے خلاف یونیفارم کوڈ آف ملٹری جسٹس کے تحت عدم اطاعات کی بناءپر کارروائی ہو گی۔ اس سے قبل ماضی میں فعال اور ویٹرن فوجیوں کے خلاف تادیبی اقدامات کی کئی واضح مثالیں قائم کی جا چکی ہیں۔ پلے بوائے اور پلے گرل میں آنے والے ایک نیوی افسر کی خوب سرزنش کر کے اس کی تنزلی بھی کر دی گئی تھی۔لیکن حیران کن بات ہے کہ آج تک کسی فوجی افسر نے اس طرح کی فلموں میں کام کبھی نہیں کیا۔۔۔

متعلقہ خبریں