پانی پئیے لیکن کچھ بھی کھانے سے پہلے

2016 ,اکتوبر 9



اسلام آباد(شفق ڈیسک) امریکا میں ہونیوالی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا ہے۔مشی گن یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق موٹاپے کے شکار افراد کے جسم پھیلنے کی بڑی وجہ پانی کی کمی بھی ہوتی ہے۔ تحقیق کے مطابق جسم میں پانی کی ضروریات اور جسمانی وزن کے درمیان تعلق واضح نہیں، تاہم یہ ضرور کہا جاسکتا ہے کہ پیاس بجھانے کا عمل صحت کیلئے کتنا ضروری ہے۔ محققین کے مطابق جسم میں پانی کی مناسب مقدار کو برقرار رکھنا بھی جسمانی وزن میں کمی لانے والی غذا جتنی اہمیت رکھتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ بات تو پہلے ثابت ہوچکی ہے کہ زیادہ پانی پینا لوگوں کو زیادہ کھانے سے روکتا ہے کیونکہ اکثر وہ بھوکے ہونے کی بجائے پیاسے ہوتے ہیں، جس کا احساس انہیں نہیں ہوتا۔ تحقیق کے مطابق ابھی یہ تو کہنا ٹھیک نہیں کہ جسم میں پانی کی کمی موٹاپے کا باعث بنتی ہے، تاہم ان دونوں کے درمیان تعلق ضرور موجود ہے۔ محققین کا کہنا تھا کہ صحت مند غذائیں جن میں پانی کا عنصر زیادہ ہو، جسم کے لیے پانی کی ضروریات کو پورا کرنے کیلئے کافی ہوتی ہیں۔ خیال رہے کہ چند ماہ پہلے ایک تحقیق میں یہ بات سامنے آئی تھی کہ کھانے سے پہلے 500 ملی لیٹر پانی پینا موٹاپے سے نجات کیلئے بہترین نسخہ ثابت ہوتا ہے۔ اس تحقیق کے دوران محققین نے موٹاپے کے شکار مرد و خواتین کو 2 گروپس میں تقسیم کیا۔ ایک گروپ کو کم کیلوریز پر مشتمل غذا فراہم کی گئی جبکہ دوسرے گروپ کو اسی غذا کے ساتھ زیادہ پانی پینے کی ہدایت کی گئی۔ 12 ہفتے بعد نتائج سے معلوم ہوا کہ جس گروپ کو کم کیلوریز کی غذا اور کھانے سے آدھے گھنٹے قبل 2 گلاس پانی پینے کی ہدایت کی گئی ان کا جسمانی وزن اس عرصے میں 8 سے 10 کلو تک کم ہو گیا۔ پہلے گروپ کا جسمانی وزن بھی 5 سے 8 کلو تک کم ہوا۔ محققین کے خیال میں زیادہ پانی پینے کی وجہ سے لوگ بہت کم کیلوریز کو اپنے جسم کا حصہ بناسکیں اور انہوں نے پہلے گروپ کے مقابلے میں ہر کھانے میں 40 فیصد کم کیلوریز کا استعمال کیا۔اس تحقیق سے سابقہ رپورٹس کی تصدیق ہوتی ہے جن میں کہا گیا تھا کہ کھانے سے پہلے پانی پینے کے نتیجے میں فی فرد کیلوریز کے استعمال میں اوسطاً 200 تک کمی آتی ہے۔

متعلقہ خبریں