گناہ اور ہمارے بہانے

2019 ,اکتوبر 18



لاہور (سید اسامہ) آج کے دور میں لوگ دنیا کی رنگینوں میں اسطرح مائل ہوئے ہیں کہ وہ حقیقی زندگی کو بھول گئے ہیں۔ 

ناکر تلاش دنیا کی رنگینوں میں 

سکوں تو خداکی یاد میں ملتا ہے

مختصر دنیاوی زندگی ، حقارت آمیز دنیاوی نمود و نمائش، اور پلک جھپکتے  بدلتے حالات  پر غور و فکر کرو تو تمہیں اسکی قیمت معلوم ہو جائے گی، اور تمہارے لئے اسکے راز فاش ہو جائیں گے، چنانچہ دنیا پر بھروسہ کرنے والا ہی دھوکے میں ہے، اور اس کی طرف مائل شخص ہی ہلاک  ہونے والا ہے۔

لوگوں نے اپنے عیبوں پر پردہ ڈالتے ہوئے گناہ کو گناہ سمجھنا ہی چھوڑ دیا ہے۔ مثلاۤۤ

رشوت،۔۔۔۔۔۔:۔ یہ تو تحفہ هے۔

موسیقی،۔۔۔۔۔۔۔:۔ یہ تو روح کی غزا هے۔   

بدنظری،۔۔۔۔۔۔۔:۔ ایک بار دیکھنا حلال هے۔ 

غیبت،۔۔۔۔۔:۔ میں اس کے منہ پہ بھی یہ بات کہہ سکتا هوں۔

سود کھانا۔۔۔۔۔۔:۔ ساری دنیا کھاتی هے۔

بیہودہ ناول پڑھنا،۔۔۔۔۔۔:۔ ہم انہیں کچھ سکیھنے کے لئے پڑھتے هیں۔
تہمت،۔۔۔۔۔۔:۔ یہ تو پوری دنیا کہہ رہی هے۔
حرام محفل،۔۔۔۔۔۔۔:۔ بس ایک رات کی تو بات هے۔
 بے پردگی،۔۔۔۔۔۔۔:۔  پردہ تو آنکھ کا هوتا هے۔

 ترک نماز،۔۔۔۔۔۔۔:۔ فلاں نمازی ہزار گناہ بھی کرتا هے۔

شراب نوشی،۔۔۔۔۔۔:۔ الله غفورالرحیم هے۔

شادیوں میں بے حیائی،۔۔۔۔۔۔:۔ یہ فاتحہ یا جنازہ تھوڑی هے۔
اسراف،۔۔۔۔۔۔:۔ لوگ کیا کہیں گے۔
عیاشی،۔۔۔۔۔۔:۔ دو دن کی زندگی هے۔
نماز باجماعت نہ پڑھنا،۔۔۔۔۔:۔ ٹائم نہیں ملتا۔
ایسے بہانے سوچنے سے پہلے ہمیں یاد رکھنا چاهيئے کہ قیامت کے دن هماری زبان، همارے ہاتھ اور همارے پاؤں همارے اعمال کی گواهی دیں گے۔

متعلقہ خبریں